آئی ایم ایف کی پاکستان کو زیادہ ٹیکس جمع کرنے کی ہدایت

ٹیکس

کراچی: آئی ایم ایف نے پاکستان کو مالی خسارہ کم کرنے کے لیے زیادہ ٹیکس جمع کرنے کی ہدایت کی ہے اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کا کہنا ہے کہ ایک ہفتے میں بینک کے ذخائر میں اٹھارہ کروڑ بیس لاکھ ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ڈائریکٹر کمیونی کیشن جیری رائس کا کہنا ہے کہ پاکستان کو مالی خسارہ کم کرنے کے لیے زیادہ ٹیکس جمع کرنا ہوگا۔

واشنگٹن میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے آئی ایم ایف کے ڈائریکٹر کمیونی کیشن جیری رائس کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف ٹیم آئندہ چند روز میں پاکستان پہنچے گی۔

یہ بھی پڑھیں : پاکستان میں درآمدات میں کمی سے زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافہ ہوگا : موڈیز

جیری رائس کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف پروگرام کا مقصد مقامی ٹیکس آمدن بڑھانا ہوگا۔ آئی ایم ایف نے پاکستانی معیشت کو سپورٹ کرنے کی منظوری دی ہے، لیکن پاکستان کو مالی خسارہ کم کرنے کے لیے زیادہ ٹیکس جمع کرنا ہوگا۔

ڈائریکٹر کمیونی کیشن آئی ایم ایف نے کہا کہ پاکستان کو اپنی مقامی ٹیکس آمدنی کے ذرائع متحرک کرنا ہوں گے۔ معاشرتی اور ترقیاتی اخراجات کے لیے بھی آمدنی بڑھانا ضروری ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ آئی ایم ایف کے قائم مقام ایم ڈی نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں ٹیکس کلیکشن کی بہتری پر زور دیا۔

دوسری طرف اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے ایک ہفتے کی تفصیلات جاری کرتے ہوئے بتایا ہے کہ مرکزی بینک کے ذخائر میں 18 کروڑ 20 لاکھ ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔

مرکزی بینک کے ذخائر8 ارب 46 کروڑ ڈالر سے تجاوز کرگئے ہیں۔ کمرشل بینکوں کے ذخائر 5 کروڑ ڈالر کمی سے سات اعشاریہ اٹھائیس ارب ڈالر رہ گئے ہیں۔

اسٹیٹ بینک کے جاری تفصیلات کے مطابق مجموعی ذخائر پندرہ اعشاریہ پچہتر ارب ڈالر ہوگئے ہیں۔