آزادی مارچ : حکومتی مذاکراتی کمیٹی اور چوہدری برادران ناکام

اسلام آباد : حکومتی مذاکراتی کمیٹی کے بعد چوہدری برادران بھی کامیاب نہ ہو پائے۔ آزادی مارچ کی صورتحال جوں کی توں ہی ہے۔ مولانا فضل الرحمان کی جانب سے کل اگلے پلان کا اعلان متوقع ہے۔

حکومتی مذاکراتی کمیٹی اور رہبر کمیٹی میں درمیانی راہ نہ نکلنے کے بعد حکومت نے چوہدری برادران سے معاونت طلب کی، البتہ چوہدری شجاعت اور پرویز الہی کی ملاقاتوں اور پے در پے رابطوں کے باوجود کوئی خاطر خواہ نتیجہ نکل نہ سکا اور ڈیڈ لاک میں کمی ہونے کے بجائے معاملات زیادہ گھمبیر ہو گئے ہیں۔

مولانا فضل الرحمان استعفےٰ یا تین مہینے کے اندر انتخابات کے مؤقف پر ڈٹ گئے۔ دوسری جانب وزیر اعظم عمران خان کے بعد حکومتی کمیٹی کے سربراہ پرویز خٹک نے بھی دو ٹوک الفاظ میں اعلان کر دیا کہ استعفیٰ کسی صورت نہیں دیا جائے گا اور اپوزیشن کی بلیک میلنگ میں نہیں آئیں گے۔

دونوں طرف سے اٹل مؤقف کے بعد سیاسی صورتحال زیادہ کشیدہ ہو گئی ہے، ایک طرف مولانا فضل الرحمان اپنے اگلے پلان کے بارے میں مشاورت کر رہے ہیں تو دوسری جانب حکومت نے بھی اپنے ہنگامی انتظامات کو حتمی شکل دینا شروع کر دی ہے۔