جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

دنیا کی ہر بستی تباہ ہوگئی مگر امام حسینؑ کی بسائی بستی آج بھی آباد ہے

امام حسینؑ نے کربلا میں صرف آٹھ روز بستی بسائی جو دس محرم کو اجڑگئی۔

دنیا میں ہزاروں سال بسنے والی بستیاں تباہ و برباد ہوگئیں لیکن کربلا کی یہ مختصر ترین بستی اجڑ کر بھی آج تک آباد ہے اور اس کی گونج دنیا بھر میں سنائی دیتی ہے۔

آج پوری انسانی تاریخ اس بستی پر روتی ہے۔

سردار نوجوانان جنت حسین ابن علیؑ جہاں گئے فضیلتوں کی برسات کرتے گئے۔

ویران اور بنجر زمین پر آٹھ دن قیام کرکے اس کو کربلا معلیٰ بنادیا۔

آپؑ دو محرم کو ارض کربلا پہنچے ۔

نینوی اور غاضریہ کے باشندوں سےساٹھ ہزار درہم میں زمین خریدلی۔ پھر زائرین کی مہمان نوازی کی شرط پر ہبہ کردی۔

گویا حسین ابن علیؑ مقام عدل میں اس مقام پر تھے کہ قبر بھی قبضے کی زمین پر قبول نہیں کی۔

دس محرم کو شہادت کے بعد تیرہ محرم کو کچھ خواتین اور بچوں کی جانب سے غیرت دلانے پر بنی اسد نے آپ کی تدفین کی۔

روایات میں ہے کہ امام حسینؑ نے اپنے ایک ایک شہید کی قبر کے مقام کی وصیت کی تھی۔

سب کو امام حسین کی وصیت کے مطابق دفن کیا گیا۔

متعلقہ خبریں