جی ٹی وی نیٹ ورک
پاکستان

نیشنل بینک کے بعد از ٹیکس منافع میں چھ ماہ کے دوران 11 فیصد کمی

نیشنل بینک

اسلام آباد : سال 2019 کی پہلی ششماہی میں جنوری تا جون کے دوران نیشنل بینک آف پاکستان (این بی پی) کے بعد از ٹیکس منافع میں 11 فیصد کی کمی واقع ہوئی ہے۔

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (پی ایس ایکس) کو بھیجے گئے مالیاتی اعداد و شمار کے مطابق جنوری تا جون 2019 کے دوران نیشنل بینک آف پاکستان نے 11 ہزار 101 ملین روپے کا خالص نفع کمایا ہے۔

گزشتہ سال میں جنوری تا جون 2018 کے دوران نیشنل بینک آف پاکستان نے 12 ہزار 492 ملین روپے کا بعد از ٹیکس منافع کمایا تھا، اس طرح گزشتہ سال کے مقابلہ میں رواں سال کے ابتدائی چھ ماہ کے دوران نیشنل بینک آف پاکستان کے بعد از تیکس منافع میں 1391 ملین روپے کی کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔

مزید پڑھیں : ایف بی آر کا سیلز ٹیکس سرکلر جاری

جس کے نتیجہ میں این بی پی کی فی حصص آمدن بھی 5.58 روپے کے مقابلہ میں 5.22 روپے فی حصص تک کم ہوگئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق سال 2018 کی پہلی ششماہی کے مقابلہ میں سال 2019 کے اسی عرصہ کے دوران این بی پی کے قبل از ٹیکس نفع میں 19 فیصد کا اضافہ ہوا ہے اور قبل از ٹیکس منافع 17160 ملین روپے کے مقابلہ میں 20385 ملین روپے تک برھ گیا۔

ٹیکسز میں 99 فیصد کے اضافہ سے این بی پی کے بعد از ٹیکس منافع میں11 فیصد کی کمی ہوئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق سال 2018 میں جنوری تا جون کے لئے نیشنل بینک آف پاکستان نے 4668 ملین روپے کے ٹیکسز ادا کئے تھے، جو جنوری تا جون 2019 کے لئے 9284 ملین روپے یعنی 99 فیصد تک بڑھ گئے، جس کے نتیجہ میں نیشنل بینک آف پاکستان کے بعد از ٹیکس نفع میں کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔

بتاتے چلیں کہ مالی سال 20-2019 کے پہلے ماہ میں ہی ایف بی آر کو ٹیکس وصولیوں کے اہداف میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ جولائی کیلئے مقررہ ہدف 310 ارب روپے میں سے پہلے 20 دن میں 181 ارب روپے وصولیاں ہوئیں۔ آئندہ 10 روز میں 129 ارب روپے کی ٹیکس وصولیوں کا ہدف مشکل ہوگیا ہے۔

متعلقہ خبریں