پاکستان کینو پیدا کرنے والا دنیا کا 12 واں بڑا ملک بن گیا

کینو

اسلام آباد : پاکستان کینو پیدا کرنے والا دنیا کا 12 واں بڑا ملک بن گیا ہے۔

پاکستان کینو پیدا کرنے والا دنیا کا 12 واں بڑا ملک ہے۔ ملک میں 6.67 ملین ایکڑ رقبہ پر کینو کاشت کئے گئے ہیں جن سے سالانہ اوسطا 26 ملین ٹن سے زائد پیداوار حاصل ہوتی ہے۔

اقتصادی ماہرین کے مطابق روس پاکستان کینو کی ایک بڑی درآمدی منڈی ہے اور پاکستان روس کو سالانہ 5 ہزار کنٹینرز یعنی 0.13 ملین ٹن کینو برآمد کرتا ہے۔ اس کے علاوہ دنیا کے مختلف ممالک کو کینو برآمد کئے جاتی ہیں۔

اقتصادی ماہرین نے کہا ہے کہ کینوکی کاشت اور برداشت کے حوالے سے جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کے فروغ کی ضرورت ہے، جس سے پیداوار میں اضافہ کو یقینی بنایا جا سکتا ہے۔

مزید پڑھیں : سیلا چاول پاکستان میں اتنے مقبول کیوں ؟

انہوں نے مزید کہا کہ کینو کی پراسیسنگ کی سہولیات میں بھی اضافہ کی ضرورت ہے۔ کینو کے مقامی کاشتکاروں کو عالمی مارکیٹ کے مقابلہ میں کم قیمت پر کینو فروخت کرنا پڑتا ہے، جس سے ان کو نقصانات کا سامنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کاشتکار طبقہ اور دیہی معیشت کی ترقی کیلئے جامع حکمت عملی کے تحت اقدامات کی ضرورت ہے۔

خیال رہے کہ سرگودھا، فیصل آباد اور ساہیوال کے ڈویژنز میں لاکھوں افراد کی روزی روٹی اس پھل سے جڑی ہوئی ہے۔ مگر کسانوں اور برآمد کنندگان کی طرف سے بين الاقوامي معيارات نہ اپنانے کی وجہ سے ترکی اور کئی اور اقوام اپنے کم معيار کے پھل کے باوجود بھی پاکستان سے آگے ہيں۔

سرگودھا کے قريب بھلوال ميں چند سال پہلے سٹرس ريسرچ انسٹی ٹيوٹ اس اميد کے ساتھ قائم کی گئی تھی کہ کینو سميت ترشاوہ پھلوں کی ايسی اقسام تيار کی جائيں گی جن کی مقامی منڈی اور بيرون ملک زيادہ مانگ ہوگی۔

اس سلسلے ميں بغير بيج کے اس پھل کی بہت زيادہ ضرورت ہے۔ ليکن ہم اس معاملے ميں ابھی بھی بہت پيچھے ہيں۔ اس کے برعکس دنيا کے ديگر ترشاہ پھل پيدا کرنے والے ممالک ہم سے بہت آگے ہيں۔

رہی سہی کسر، برآمد کنندگان کی روایتی سستی کی وجہ سے پوری ہوگئی ہے۔ ابھی تک اس پھل کو پاکستان کی شناخت اور برانڈ کے طور پر دنيا ميں متعارف نہيں کروايا جاسکا ہے۔

اگر اس سلسلے ميں پاکستان نے اس پھل کے سلسلے ميں بھی اپنے جغرافيائی اشارے اور ملکيت دانش کے حق نہ جتائے تو باسمتی چاول کی طرح کینو پر بھی کوئی دوسرا ملک اپنا حق جتا لے گا اور ہم ديکھتے ہی رہ جائيں گے۔