جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

پولیس نے حبیب اسکول میں ڈوبنے والے بچے پر اہم معلومات حاصل کرلیں

پولیس

کراچی : نجی اسکول کے سوئمنگ پول میں ڈوب کر گیارہ سالہ بچے کے جاں بحق ہونے کا واقعے پولیس نے ابتدائی تفتیش کے دوران اہم معلومات حاصل کرلیں ہیں۔

ایس ایس پی سٹی مقدس حیدر کے مطابق سوئمنگ انسٹرکٹرز کا کہنا تھا کہ عثمان کو ڈوبتے ہی نکال لیا تھا، بیان میں عثمان کو تین سے پانچ سیکنڈ میں باہر نکالنے کا بتایا گیا۔ ابتدائی تفتیش کے دوران انسٹرکٹرز کا یہ بیان غلط ثابت ہوا۔ عثمان کو ڈوبنے کے تقریبا چار سے پانچ منٹ بعد باہر نکالا گیا۔

ایس ایس پی کا کہنا تھا کہ جس وقت عثمان ڈوبا اس وقت کوئی انسٹرکٹر موجود نہیں تھا۔ ابتدائی تفتیش کے دوران اب تک یہ معلومات حاصل ہوئی ہیں۔ بچہ ڈوبنے کی اطلاع پولیس کو نہیں دی گئی۔ اسکول انتظامیہ نے بغیر پولیس کو اطلاع دیئے ساوتھ سٹی اسپتال منتقل کیا۔

مزید پڑھیں : سرکاری اسکول تعلیم سے زیادہ مسائل کا گڑھ

ایس ایس پی مقدس حیدر نے بتایا کہ بچے کو جب اسپتال منتقل کیا گیا وہ جاں بحق ہو چکا تھا۔ ابھی تک پولیس نے باقاعدہ تفتیش کا آغاز نہیں کیا ہے۔ پولیس اس کیس پر باقاعدہ طور پر کام کرکے ذمہ داروں کا تعین کرے گی۔

واضح رہے کہ کراچی کے حبیب اسکول پی آئی ڈی سی میں چھٹی جماعت کا طالبعلم اور دو بہنوں کا اکلوتا بھائی عثمان اسکول کے سوئمنگ پول میں ڈوب کر جان کی بازی ہارگیا۔

واقعے کے بعد پولیس نے حبیب پبلک اسکول سے دو سوئمنگ ٹرینرز ممتاز اور سیف اللہ کو حراست میں لے لیا۔ واقعے کا مقدمہ بچے کے والد کی مدعیت میں سوئمنگ انسٹرکٹر، پرنسپل اور اسکول انتظامیہ کے خلاف درج کرلیا گیا۔

عثمان کی لاش کو پہلے ساؤتھ سٹی اسپتال لے جایا گیا، جس کے بعد اسے سول اسپتال منتقل کردیا گیا۔ اہلخانہ شدت غم سے نڈھال ہیں۔ انہوں نے میڈیا کو مؤقف دینے سے بھی گریز کیا۔

دوسری جانب ڈائریکٹر پرائیویٹ اسکولز منصوب صدیقی نے حبیب پبلک اسکول کی پرنسپل سے رابطہ کیا اور واقعے کی تفصیلات طلب کیں۔

منصوب صدیقی کے مطابق اسکول میں سوئمنگ ڈے تھا، پندرہ بچوں کو سوئمنگ کلاس دی جارہی تھی، سوئمنگ پول بچوں کے قد سے گہرا تھا، بچے نے گھبرا کر غوطہ کھایا اور بیہوش ہوگیا۔ بچے کو اسکول انتظامیہ اسپتال لے کر پہنچی تو بچہ دم توڑ گیا۔

انہوں نے کہا کہ دو انسٹرکٹر بچوں کو سوئمنگ سکھا رہے تھے، اس کے باوجود ایسا حادثہ ہونا تشویشناک عمل ہے۔ اس معاملے پر اسکول کی رجسٹریشن بھی معطل کی جاسکتی ہے۔

متعلقہ خبریں