جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

لاہور ہائی کورٹ کا ڈی جی ایل ڈی اے کی معافی قبول کرنے سے انکار

لاہور ہائی کورٹ ڈی جی ایل ڈی اے

لاہور : لاہور ہائی کورٹ نے ڈی جی ایل ڈی اے احمد عزیز تارڑ کی معافی قبول کرنے سے انکار کردیا ہے۔

لاہور ہائی کورٹ میں ڈی جی ایل ڈی اے احمد عزیز تارڑ کے خلاف توہین عدالت کی درخواست پر سماعت ہوئی۔ مسز جسٹس عائشہ اے ملک نے ٹارگٹ ٹریڈ سینٹر کے مالک خالد محمود بٹ کی درخواست پر کارروائی کی۔

عدالت کے حکم پر ڈی جی احمد عزیز تارڑ پیش ہوئے۔ عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آپ عدالت میں نہیں آتے اور نہ ریکارڈ پیش کرتے ہیں۔ ڈی جی نے عدالت سے معافی مانگ لی۔

عدالت نے کہا کہ آپ اصل ریکارڈ دکھائیں۔ یہ ریکارڈ اصل نہیں ہے، ایکوزیشن کی اصل فائل دکھائیں جس کے تحت منصوبہ شروع کیا گیا۔

ڈی جی نے کہا کہ مجھے ریکارڈ دیکھنے کے لیے مہلت دی جائے۔ عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آپ اس طرح فائل بناتے ہیں۔ پھر کہتی ہوں یہ اصل فائل نہیں۔ آپ کو ریکارڈ پیش نہ کرنے کا کیا مسئلہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں : سپریم کورٹ کا ایک ماہ میں کراچی کی زمینوں کی تفصیلات پیش کرنے کا حکم

ڈی جی نے پھر مہلت مانگ لی، جس پر لاہور ہائی کورٹ نے کہا کہ آپ لوگ عدالتوں کا وقت ضائع کرتے ہیں۔ آپ دو سالوں سے اصل ریکارڈ پیش نہیں کر رہے، مجھے وضاحت نہیں چاہیے، اصل ریکارڈ چاہیے۔ آپ ذمہ داری پوری نہیں کر رہے۔

عدالت نے ڈی جی کی معافی قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ عدالت نے کہا کہ پہلے کوریڈور منصوبہ کی لینڈ ایکوزیشن کا اصل ریکارڈ پیش کریں۔ اگلی سماعت پر معافی دینے کا فیصلہ کروں گی۔ درخواست پر سماعت اگلے ہفتے تک ملتوی کر دی گئی۔

لاہور ہائی کورٹ سے متعلق تاریخی معلومات جاننے کے لیئے اس لنک پر کلک کریں

درخواست گزار کا مؤقف ہے کہ عدالت نے ڈی جی کی توہین عدالت کے نوٹس واپس لینے کی درخواست مسترد کر تھی۔ اصل فائل پیش نہ کرنے پر برہمی کا اظہار کیا تھا، پیش کردہ ریکارڈ فائل کو بو گس قرار دے دیا تھا۔

درخواست کے مطابق جیل روڈ پر سگنل فری کوریڈور منصوبہ پر سپریم کورٹ نے برہمی کا اظہار کیا، جس پر ایل ڈی اے نے ٹارگٹ ٹریڈ سینٹر کو انتقامی کارروائی کا نشانہ بنانا شروع کر دیا۔ عدالت کے حکم کی پاسداری نہیں کی جا رہی۔

درخواست میں استدعا کی گئی کہ عدالت ڈی جی کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لائے۔

متعلقہ خبریں