جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

چھاتی کے کینسر میں مبتلا 50 فیصد خواتین جان سے ہاتھ دھو بیٹھتی ہیں : صدر مملکت

چھاتی کے کینسر میں

اسلام آباد : صدر مملکت کا کہنا ہے کہ جلد تشخیص نہ ہونے کی وجہ سے چھاتی کے کینسر میں مبتلا 50 فیصد خواتین جان سے ہاتھ دھو بیٹھتی ہیں۔

صدر پاکستان ڈاکٹر عارف علوی نے میڈیا کو بریسٹ کینسر کی آگاہی مہم کے حوالے سے خطوط ارسال کردیئے ہیں، جس میں صدر کا کہنا ہے کہ پاکستان میں خواتین میں کینسر کے چوالیس فیصد کیسز چھاتی کے کینسر کے ہیں۔ جلد تشخیص ہونے سے مرض سے نجات پانے کا اٹھانوے فیصد امکان % ہے۔

انہوں نے کہا کہ معاشرے میں ممنوع موضوع ہونے کی وجہ سے خواتین مرض کی جلد تشخیص نہیں کروا پاتی۔ جلد تشخیص نہ ہونے کی وجہ سے چھاتی کے کینسر میں مبتلا 50 فیصد خواتین جان سے ہاتھ دھو بیٹھتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں : بریسٹ کینسر سب سے زیادہ تشخیص ہونے والی کینسر کی قسم بن چکی

ان کا کہنا تھا کہ خواتین کو ہر تین ماہ میں ایک مرتبہ اپنا معائنہ خود کرنے کی حوصلہ افزائی کرنی چاہیے۔ آگاہی نہ ہونا، دیر سے ڈاکٹر سے رجوع چھاتی کے کینسر سے زیادہ شرح اموات کا باعث ہیں۔ دیر سے تشخیص کی وجہ سے ایک لاکھ میں سے 50 ہزار خواتین فوت ہو جاتی ہیں۔

صدر مملکت نے کہا کہ بیگم ثمینہ علوی اور ان کی ٹیم نے اکتوبر میں لوگوں کو آگاہی کیلئے مختلف پروگرام ترتیب دیے ہیں۔ ان پروگراموں میں خود تشخیصی اور مرض کی بروقت تشخیص کی اہمیت کو اجاگر کیا جائے گا۔

صدر عارف علوی کا کہنا تھا کہ میڈیا نے گزشتہ سال لوگوں کو بریسٹ کینسر بارے تعلیم دینے کیلئے مؤثر آگاہی مہم چلائی۔ میڈیا خبروں، ٹالک شوز، آرٹیکلز، کالمز اور ایڈیٹوریل کے ذریعے آگاہی پیدا کرے۔

انہوں نے کہا کہ میڈیا چَھاتی کے کینسر کے بارے میں آگاہی پیدا کرنے کیلئے حکومت اور سول سوسائٹی کی کوششوں کا ساتھ دے۔ میڈیا تنظیمیں بریسٹ کینسر کے بارے میں آگاہی پیدا کرنے کیلئے اپنے لوگو کو "گلابی” رنگ دیں۔

متعلقہ خبریں