جی ٹی وی نیٹ ورک
پاکستان

آڈیو لیک کے بعد اب وزیراعظم ہاؤس میں باہر سے ملاقات کیلئے کون آئیگا؟: وزیراعظم

شہباز شریف

اسلام آباد: شہباز شریف کا کہنا ہے کہ آڈیو لیک اہم معاملہ اور سنجیدہ کوتاہی ہے، سیکیورٹی لیپس بہت بڑا سوالیہ نشان ہے، ایسی صورتحال ہوگی تو وزیراعظم ہاؤس میں ملاقات کیلئے کون آئیگا۔

وزیراعظم شہباز شریف کا نیوز کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا کہ عالمی رہنماؤں سے حوصلہ افزاء ملاقاتیں ہوئیں، چین اور روس کے رہنماؤں سے ملاقاتیں ہوئیں، کاربن کے اخراج میں پاکستان کا حصہ ایک فیصد سے بھی کم ہے، سیلاب کی شکل میں ہمیں ناکردہ گناہوں کی سزا ملی، ایس سی او کانفرنس میں ہم نے تمام پہلوؤں کو اجاگر کیا، پاکستان میں حالیہ سیلاب سے ہونے والی تباہ کاریوں پر بات ہوئی۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ بھارت میں مسلمانوں کے ساتھ ناروا سلوک کی بھرپور مذمت کی، دنیا کو بتایا بھارت مسلمانوں کے ساتھ کیسے زیادتی کررہا ہے، بھارت نے یکطرفہ طور پر 5 اگست 2019 کو کشمیر کی حیثیت ختم کی، پاکستان کا مؤقف بھرپور انداز میں پیش کیا، بلاول بھٹو کی بھرپور معاونت اور کوشش شامل تھی، پاکستان تنہائی کے دور سے نکل آیا ہے، تنہائی سے پاکستان کو نقصان پہنچا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پچھلی حکومت نے خارجہ پالیسی کا بیڑہ غرق کیا، پچھلی حکومت نے برادر ممالک کو ناراض کیا اس کا عینی شاہد ہوں، دوست ممالک نے جو الفاظ مجھے کہے میں وہ دہرا نہیں سکتا، امریکی صدر سے ملاقات میں پاکستان سے اظہار ہمدردی اور امدا پر شکریہ ادا کیا، جنرل اسمبلی خطاب میں سیلاب، کشمیر اور فلسطین پر مؤقف پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ پچھلی حکومت کے سربراہ خود کو عقل کل سمجھتے تھے، پچھلی حکومت کیلئے دوست ممالک نے جو باتیں کیں وہ بتاؤں تو آپکو پسینہ آجائیگا، اللہ کے فضل سے دشمن ہماری طرف میلی آنکھ سے نہیں دیکھ سکتا، پچھلی حکومت نے معیشت کا حلیہ بگاڑ دیا ہے، ہم قطرہ قطرہ جوڑ کر مسائل کو حل کررہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: آڈیو لیکس کی ٹائمنگ انتہائی اہم ہے، ذمے داروں کے خلاف سخت ایکشن لیں گے: جاوید لطیف

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ آڈیو لیک اہم معاملہ اور سنجیدہ کوتاہی ہے، سیکیورٹی لیپس بہت بڑا سوالیہ نشان ہے، ایسی صورتحال ہوگی تو وزیراعظم ہاؤس میں ملاقات کیلئے کون آئیگا، آڈیو لیکس کا نوٹس لے رہا ہوں اور تحقیقاتی کمیٹی بنارہا ہوں، ہائی پاور کمیٹی تحقیقات کرکے آڈیو لیکس معاملے کی تہہ تک پہنچے گی، مریم نواز نے مجھے کبھی کسی سفارش کا نہیں کہا، مریم نواز نے اپنے داماد کیلئے سفارش نہیں کی، ہیرے جواہرات کی پیشکش کی آڈیو بھی آپ نے سن رکھی ہے، کسی نے کوئی ہیرے ، جواہرات کی بات سنی؟۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ عمران نیازی نے اپوزیشن پر جھوٹے کیسز بنائے، بشیر میمن کو عمران خان نے بلا کر کہا ان پر مقدمے بناؤ، یہ وزیراعظم ہاؤس کی نہیں ریاست پاکستان کے وقار کی بات ہے، آڈیو لیکس میں کوئی لین دین کی بات نہیں، گھڑیاں بیچ کر پیسے جیب میں ڈال لیے گئے، چینی ایکسپورٹ کرنے کا اربوں روپے کا غبن ہے، رائی کا پہاڑ نہیں بنانا چاہیئے۔

ان کا کہنا تھا کہ بلین ٹری کہاں گیا، پشاور میٹرو میں اربوں روپے کھائے گئے، آئی ایم ایف نے سیلاب میں تعاون کی یقین دہائی کرائی ہے، ڈاکٹر توقیر سے کہا پی ٹی آئی دور میں مشین بھارت سے آدھی منگوائی، ڈاکٹر توقیر کو کہا میں مریم نواز سے خود بات کرلوں گا، بتائیں اگر میں نے ڈاکٹر توقیر سے بات کی ہے تو اس میں کیا غلط ہے، کوئی سفارش ہے نہ کوئی کام کیا گیا بلکہ معذرت بھی کی گئی، سفارش پر کوئی کام نہیں کیا گیا تو اس میں غلط کیا ہے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ این سی اے میں 2 سال کیس کے بعد مجھے کلین چٹ ملی، تم الٹے ہوگئے لیکن کرپشن کا کوئی الزام ثابت نہیں کرسکے، روسی صدر سے باہمی تعلقات کی بات کی گئی، 2 مہینے پہلے کہا تھا روس سے سستی گندم لینے کیلئے تیار ہیں، این سی اے کا بند لفافہ کابینہ سے منظور کرالیا گیا، مریم اورنگزیب نے لندن میں طعنے برداشت کیے، میں اگر باہر مانگنے جاتا ہوں تو یہ کیا تجوریاں لیکر جاتے تھے؟۔

انہوں نے کہا کہ اسحاق ڈار تجربہ کار آدمی ہیں وہ تشریف لائے ہیں، آٹے کی قیمت صوبائی معاملہ ہے، قوم سے درخواست ہے دعا کریں کہ ڈالر100روپے پر واپس آجائے، ہم بھاگنے والے نہیں، معیشت ٹھیک کرکے رہیں گے، عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمت گری ہے، اگلے 15 دن میں اس کا اثر سامنے آئے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف ڈاکٹروں کی اجازت سے جلد پاکستان آئیں گے، حکومت میں آنے کا کوئی پچھتا وا نہیں، ریاست بچانے کیلئے اقتدار میں آئے، مفتاح اسماعیل کے شکر گزار ہیں انہوں نے محنت سے کام کیا ہے، اس میں شک نہیں مفتاح اسماعیل نے پاکستان کو ڈیفالٹ سے بچایا ہے، مفتاح اسماعیل کو کہا پارٹی کے اہم رکن ہیں مزید کام بھی لیں گے۔

متعلقہ خبریں