جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

حلقہ این اے 249، مسلم لیگ ن سمیت تمام جماعتوں کا ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا بائیکاٹ

ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا

کراچی : مسلم لیگ ن سمیت تمام جماعتوں نے حلقہ این اے 249 کے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کے عمل کا بائیکاٹ کردیا۔

الیکشن کمیشن کی جانب مسلم لیگ ن کی درخواست پر حلقہ این اے 249 کے ضمنی انتخاب میں ڈالے گئے ووٹوں کی دوبارہ گنتی کا عمل شروع ہوا، تاہم مسلم لیگ ن، پی ٹی آئی، ایم کیو ایم اور پی ایس پی نے بائیکاٹ کردیا۔

مسلم لیگ ن کے رہنماء مفتاح اسماعیل نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ آر او نے کہا فارم 46 نہیں دیا جائے گا، جو فارم 45 ملے ان پر دستخط نہیں تھے۔ آر او نے کہا کاؤنٹر چیک نہیں کرنے دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی اکیلی دوبارہ گنتی پر زور دے رہی ہے۔ کتنے بیلٹ پیپرز آئے، کتنے استعمال ہوئے، ریکارڈ نہیں دیا جارہا ہے۔ غیر استعمال شدہ بیلٹ گنے جاتے ہیں جو کہ گنے نہیں گئے، جو بیلٹ پیپر استعمال نہیں ہوئے ہم نے اس کا بھی ریکارڈ مانگا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : مسلم لیگ ن خوشاب کے ضمنی انتخاب میں تہتر ہزار سے زائد ووٹ لے کر کامیاب

ان کا کہنا تھا کہ بیگ بھی دیکھے جس پر سیل نہیں تھی۔ حلقے میں بیلٹ باکس کی سیلیں بھی ملیں ہیں۔ اگر شکست ہوگئی تو ایک بار نہیں، ہزار بار تسلیم کروں گا۔

تحریک انصاف کے رہنماء امجد اقبال آفریدی نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور الیکشن کمیشن ملے ہوئے ہیں۔ محکمہ تعلیم کے ملازمین پریزائیڈنگ افسر تھے۔ دھاندلی ہوئی ہے۔ پری پلان الیکشن ہوا ہے۔ ری الیکشن کی جانب کیوں نہیں جاتے؟

انہوں نے کہا کہ ہم نے فرانزک آڈٹ کا مطالبہ کیا ہے۔ تمام جماعتوں نے درخواست دی ہے کہ فارم 46 کے بغیر ری کاؤنٹنگ نہیں ہو سکتی۔

ایم کیو ایم کے امیدوار حافظ مرسلین نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ 80 سے زائد ہمیں فارم 45 نہیں دیئے گئے۔ ووٹ کے تھیلے رسی سے باندھے ہوئے تھے، سیل نہیں تھی۔

متعلقہ خبریں