جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

امریکا ایران کی ثالثی کرادیتے تو آج قاسم سلیمانی زندہ ہوتے: مشاہد اللہ

مشاہداللہ

اسلام آباد: سینیٹر مشاہد اللہ نے وزارت خارجہ کے فیصلوں پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ جو ڈیسک بجا کر کہتےتھے کہ خارجہ پالیسی وزارت خارجہ میں بنے گی، وہ دیکھ لیں، آج کل کیا ہورہا ہے، فیصلے وزارت خارجہ میں نہیں کہیں اور ہو رہے ہیں۔

مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے کہ قاسم سلیمانی ایران کی اہم شخصیت تھے، ان کی ہلاکت کے باعث اگر جنگ ہوئی تو خطے اور امریکا پر خطرناک اثرات مرتب ہوں گے۔

سینیٹ میں اظہار خیال کرتے ہوئے ن لیگی سینیٹر نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کا مواخذہ ہے اور امریکا میں انتخابات بھی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جو ڈیسک بجا کر کہتےتھے کہ خارجہ پالیسی وزارت خارجہ میں بنے گی، وہ دیکھ لیں، آج کل کیا ہورہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: تمہیں تو میں باندھ کر آیا تھا، مشاہد اللہ کا فواد چوہدری پر وار

مشاہد اللہ خان نے مزید کہا کہ امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو ساری دنیا کے وزرائے اعظم یا وزرائے خارجہ کو فون کررہا ہے، یہاں نہیں کررہا۔

ان کا کہنا تھا کہ وزارت خارجہ میں نہیں، فیصلے کہیں اور ہورہے ہیں، ثالثی کرانے کی بات کرنے والے اب ثالثی کرائیں اور جنگ کو روکیں، ن لیگی رہنما نے یہ بھی کہا کہ امریکا ایران کی ثالثی کرادیتے تو آج جنرل قاسم سلیمانی زندہ ہوتے۔

متعلقہ خبریں