امریکا نے عالمی ماحولیاتی معاہدے سے باضابطہ علیحدگی کا اعلان کردیا

عالمی ماحولیاتی معاہدے

واشگٹن : امریکا نے عالمی ماحولیاتی معاہدے سے باضابطہ علیحدگی کا اعلان کردیا ہے۔ صدر ٹرمپ نے اقوام متحدہ کو بھی فیصلے سے آگاہ کردیا۔ امریکی وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ اگلے ایک سال میں معاہدے سے نکل جائیں گے۔

امریکا نے پیرس میں ہونے والے عالمی ماحولیاتی معاہدے سے باضابطہ طور پر علیحدگی کا اعلان کردیا ہے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے فیصلے سے اقوام متحدہ کے جنرل سیکریٹری ایتونیو گوتریس کو بھی آگاہ کردیا۔

امریکی وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ پیرس معاہدے سے اگلے ایک سال کے دوران نکل جائیں گے۔ فرانس نے امریکی فیصلے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے امریکی اقدام کو افسوس ناک قرار دے دیا۔

یہ بھی پڑھیں : آلودہ ماحول میں رہنے سے کئی بیماریوں کا خطرہ

دو ہزار سولہ میں ہونے والے پیرس معاہدے کا مقصد بڑھتی ماحولیاتی آلودگی کو قابو کرنا ہے۔ معاہدے میں شامل تقریباً دو سو ممالک کو ماحولیاتی آلودگی کم کرنے کا ہدف دیا گیا۔

پیرس معاہدے میں شامل ممالک نے آلودگی پید ا کرنے والے ذرائع توانائی پر کم سے کم انحصار کرتے ہوئے ہوا اور شمسی ذرائع توانائی کو فروغ دینے پر اتفاق کیا۔

اس سے قبل سابق امریکی صدر باراک اوباما نے معاہدے پر دستخط کرتے ہوئے امریکا کی طرف سے گرین ہاؤس گیس کے اخراج میں چھبیس سے اٹھائیس فیصد کمی کا وعدہ کیا تھا۔