جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

امریکہ طالبان امن معاہدہ؛ آج پاکستان کی عزت میں بے پناہ اضافہ ہوا: وزیرخارجہ

امن معاہدہ

دوحہ: شاہ محمود قریشی نے کہا کہ آج پاکستان کی عزت میں بے پناہ اضافہ ہوا ہے، اب افغان آپس میں بیٹھیں اور اپنے مستقبل کے بارے میں فیصلہ کریں کہ مستقبل کا افغانستان کیسا ہونا چاہیئے۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا امریکہ اور طالبان کے امن معاہدے پر کہنا تھا کہ آج کا دن تاریخی دن ہے، اللہ نے آج کے دن پاکستان کو عزت دی ہے، آج پاکستان کو جس طرح سہرایا گیا ہے وہ قابل دید ہے۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ آج کا دن ممکن نہ تھا اگر پاکستان دیانتداری اور خلوص کے ساتھ اس معاملے کو آگے بڑھانے میں کردار ادا نہ کرتا، پاکستان کے لئے کردار ادا کرنا آسان نہیں تھا، پیچیدہ تھا، کسی کے وہم و گمان میں بھی نہیں کہ ممکن ہوپائے گا ۔

وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ کوئی سوچ نہیں سکتا تھا کہ اس طرح طالبان اور امریکا ایک چھت کے نیچے، ایک میز پر بیٹھ کر اس قسم کے دستخط کریں گے، کوئی سوچ نہیں سکتا کہ وہ امن اس طرح حاصل ہوپائے گا جو بیس سال کی کوششوں سے حاصلل نہیں ہوسکا۔ پاکستان کو معاہدے سے بہت خیرسگالی ملی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایسی قوتیں موجود تھیں اور اب بھی موجود ہیں جو نہیں چاہتی کہ یہ دن طلوع ہو، آج کے دن میں رخنہ، ڈالنے دیواریں کھڑی کرنے اور رکاوٹیں ڈالنے کی ہر ممکن کوشش کی، ہماری نیت اچھی تھی تو بات آگے بڑھتی گئی۔

انہوں نے کہا کہ آج وزرائے خارجہ کے درمیان پچاس کے قریب ممالک کے مندوبین، انٹرنیشنل میڈیا کے درمیان پاکستان مرکزی کردار تھا، بھارت جس پاکستان کو سفارتی سطح پر تنہا اور بلیک لیسٹ میں دھکیلنے کی کوشش کررہا تھا آج وہ پاکستان مرکزی کردار تھا۔

آج پاکستان کے کردار کو دنیا بھر میں سہراہا جارہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: امن معاہدے پر امریکا اور طالبان کے دستخط؛ امریکی فوج 14 ماہ میں مکمل انخلا کرے گی

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ بھارت بالکل نہیں چاہتا تھا یہ پیش رفت ہو، بھارت نے اس میں وہم و گمان ڈالنے کی کوشش کی اور بھارت نے اس نشست کو بے سود سمجھنے والے افغانستان کے اندر اور باہرموجود لابی کو ورغلانے اور اکسانے کی کوشش کی، لیکن اللہ نے پاکستان کو سرخرو کردیا، ہماری محنت اور قربانی رنگ لے آئی۔

وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ آج پاکستان کی عزت میں بے پناہ اضافہ ہوا ہے، اب افغان آپس میں بیٹھیں اور اپنے مستقبل کے بارے میں فیصلہ کریں کہ مستقبل کا افغانستان کیسا ہونا چاہیئے۔ اگر امن معاہدے کو بردباری سے آگے بڑھایا جائے تو نئے دور کا آغاز ہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ افغان اپنے اندرونی شک و شہبات غلبہ پالیں تو بات آگے بڑھے گی، افغان کشمکش کا شکار ہوگئے تو یہ سنہری موقع ہاتھ سے نکل جائے گا۔

متعلقہ خبریں