ایڈز وائرس پنجاب سمیت دیگر صوبوں میں بھی ہیں : عذرا پیچوہو

لاڑکانہ : صوبائی وزیر صحت عذرا پیچوہو نے کہا ہے کہ ایچ آئی وی متاثرین کی تصاویر و نام شائع یا نشر کرنے والوں کے خلاف کاروائی ہوگی۔

صوبائی وزیر صحت عذرا پیچوہو نے کمشنر آفس لاڑکانہ میں میڈیا بریفنگ میں بتایا کہ رتوڈیرو میں اسکریننگ کا عمل بہتر طور پر جاری ہے، ایچ آئی وی وائرس کے پھیلنے کے ذمہ دار عطائی ڈاکٹر سمیت غیر معیاری کلینکس ہیں۔

عذرا پیچوہو نے کہا کہ ایچ آئی وی وائرس کے پھیلنے کی خبروں کو میڈیا پر نام اور تصاویرکے ساتھ نہیں شائع یا نشر کرنا چاہیئے، آئندہ ایچ آئی وی متاثرین کی تصاویر و نام شائع یا نشر کرنے والوں کے خلاف کاروائی ہوگی۔

صوبائی وزیر صحت نے کہا کہ 60 ملین کٹس درکار ہیں، جو کہ ڈونرز کے ساتھ مل کر ارینج کر لیں گے، معاشرے میں ایچ آئی وی وائرس متاثران کو اچھی رویئے کی ضرورت ہے۔

عذرا پیچوہو نے کہا کہ نجی کلینکس سمیت دیگر ہسپتالوں میں آٹو لاک سرنج استعمال نہ کرنے والوں کے خلاف کاروائی ہوگی، لاشاری، پیر بخش بھٹو، رتوڈیرو، نوڈیرو اور بنگلدیرو میں مزید کیمپ قائم کیئے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہسپتالوں سے استعمال شدہ سرنجز کو ری پیک کرکے استعمال لایا جا رہا ہے، ایچ آئی وی وائرس آوُٹ بریکس سندھ سمیت پنجاب و دیگر صوبوں میں بھی ہیں۔

صوبائی وزیر صحت نے کہا کہ اسپتال بہت بری حالت میں ہے، اسپتالوں کی حالت بہتر بنانے کے لئے ہم بجٹ بنا رہے ہیں۔

بریفنگ کے موقع ہر ڈی جی صحت، اسپیشل سیکریٹری صحت، ڈبلیو ایچ او، سندھ ایڈز کنٹرول پروگرام کے اعلیٰ حکام بھی شریک تھے۔