جی ٹی وی نیٹ ورک
پاکستان

حکومت مخالف بیان کیس، سماعت 2 دسمبر تک ملتوی، ہر 20 دن بعد مقدمہ بنا دیا جاتا ہے : کیپٹن (ر) صفدر

ہر 20 دن بعد

لاہور : کیپٹن صفدر کا کہنا ہے کہ ہر 20 دن بعد مجھ پر کوئی مقدمہ بنا دیا جاتا ہے۔

کیپٹن (ر) صفدر کیخلاف حکومت مخالف ویڈیو بیان کیس پر سماعت ہوئی۔ کیپٹن صفدر کے خلاف تھانہ اسلام پورہ کی جانب سے چالان جمع کرا دیا گیا۔

عدالت نے آئندہ سماعت پر کیپٹن صفدر کے وکلاء سے دلائل طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت مزید کارروائی کے لیے 2 دسمبر تک ملتوی کر دی۔

عدالت میں سرکاری مؤقف کے مطابق ملزم کیپٹن صفدر اپنے ایک کیس کے سلسلے میں سیشن کورٹ آئے، بعد ازاں کیپٹن صفدر بار روم میں چلے گئے جہاں پر انھوں نے نامناسب تقریر کی۔ کیپٹن صفدر وہاں پر ایک ویڈیو بیان کے ذریعے حکومت پاکستان کیخلاف عوام کو باہر نکلنے پر اکسایا۔

یہ بھی پڑھیں : پی ٹی آء نے کیپٹن صفدر کی گرفتاری کے لیئے ڈرامہ رچایا : سعید غنی

پیشی کے موقع پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کیپٹن (ر) صفدر کا کہنا تھا کہ یہ سیاسی مقدمات ہیں ان کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ میاں صاحب پر بھی متعدد مقدمات بنائے گئے۔ کبھی ہائی چیکنگ کا تو کبھی اٹک قلعے میں بند کیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ ہر 20 دن بعد مجھ پر کوئی مقدمہ بنا دیا جاتا ہے۔ جب کچھ نہیں بنتا تو دہشت گردی کی دفعات ڈال دیتے ہیں۔ ان کی بدنیتیاں سامنے آنا شروع ہوگئیں ہیں۔ پشاور میں میرے خلاف مقدمہ درج کروا کر وارنٹ جاری کروا دیئے گئے ہیں۔ حکومت جانے سے پہلے تمام کیسز ختم ہو جائیں گے۔

متعلقہ خبریں