جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

لاہور ہائی کورٹ میں بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی کا قانون چیلنج

لاہور : پہلی بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی پر پابندی کے قانون میں سزا پانے والے مجرم نے قانون کی ترمیم کو لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کردیا ہے۔

لاہور ہائیکورٹ میں پہلی بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی پر پابندی کے قانون کو چیلنج کردیا گیا ہے۔ عدالت سے قید و جرمانے کی سزا پانے والے درخواست گزار نے آئینی درخواست میں قانون میں کی گئی ترمیم کو چیلنج کر دیا۔

درخواست میں وزارت قانون اور صوبائی سیکرٹری قانون کو فریق بنایا گیا ہے۔ درخواست گزار کے مطابق پہلی بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی کرنے کی پاداش میں جوڈیشل مجسٹریٹ سیالکوٹ نے سزا سنائی۔

شیخوپورہ : موٹر وے پر حادثہ، چار افراد جاں بحق

پنجاب حکومت نے مسلم فیملی لاز آرڈیننس 1961ء اور رولز میں بغیر اختیار ترمیم کی۔

درخواست گزار کا مؤقف ہے کہ آرڈیننس کا اطلاق پورے پاکستان میں ہوتا ہے اور ترمیم کا اختیار صرف وفاق کو حاصل ہے۔ وفاقی حکومت کی جانب سے دوسری شادی پہلی بیوی کی اجازت سے مشروط کرنے کے قانون کا کوئی گزیٹ نوٹیفکیشن جاری نہیں کیا گیا۔ پنجاب حکومت کی جانب سے قانون میں ترمیم آئین کی خلاف ورزی ہے۔

درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی مسلم فیملی لاز آرڈیننس 1961ء میں صوبائی حکومت کی ترمیم کو غیر آئینی قرار دے کر کالعدم کیا جائے۔

متعلقہ خبریں