جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

عمران خان کیخلاف فوجداری کارروائی، فرد جرم آج بھی عائد نہ ہوسکی

فرد جرم

اسلام آباد : الیکشن کمیشن کی جانب سے پی ٹی آئی وکلاء کو تصدیق شدہ کاپیاں فراہم کرنے کے بعد عمران خان پر فرد جرم کی اگلی تاریخ مقرر کی جائے گی۔

ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹس اسلام آباد میں الیکشن کمیشن کی عمران خان کے خلاف فوجداری کارروائی کے حوالے سے سماعت ہوئی۔

عمران خان کی جانب سے کیس لڑنے کے لیے چار وکلاء کی ٹیم تشکیل دے دی گئی ہے۔ وکلاء میں علی ظفر، علی بخاری، خواجہ حارث اور گوہر علی خان شامل ہیں، جن کا وکلات نامہ جمع کرادیا گیا۔

عمران خان کی جانب سے طبی بنیادوں پر حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کردی گئی۔ جج نے استفسار کیا کہ کیا مچلکے جمع کروا دیئے؟ وکیل نے بتایا کہ جی عمران خان کے ضمانتی کل مچلکے جمع کروا دیئے گئے ہیں۔

عدالت نے کہا کہ ایسے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر ہوتی رہی تو فرد جرم کیسے عائد ہوگی؟ علی بخاری نے کہا کہ ہمیں مصدقہ کاپیاں فراہم نہیں کی گئیں۔ واٹس ایپ کی اسکرین شارٹس لگا کر کاپیاں فراہم نہیں کی جاتیں۔

یہ بھی پڑھیں : بار بار انتخابات سے بحران پیدا ہو گا،عمران خان کا ایک مطالبہ مانیں تو دوسرا کر دے گا : سعد رفیق

الیکشن کمیشن کے وکیل نے کہا کہ ہم نے پی ٹی آئی وکلاء کو عدالت کے سامنے مصدقہ کاپیاں فراہم کی ہیں۔ عدالت نے حکم دیا کہ تمام ثبوتوں کی تصدیق شدہ کاپیاں عدالت اور پی ٹی آئی کو فراہم کریں۔ وکیل نے کہا کہ ہم اج ہی کمپلینٹ اور ثبوتوں کی مصدقہ کاپیاں فراہم کردیں گے۔

الیکشن کمیشن کے وکیل نے کہا کہ عمران خان کے وکیل اپنے ساتھ مراثی لاتے ہیں، جس پر شور مچ گیا۔ پی ٹی آئی وکلاء نے کہا کہ انہیں کہیں اپنے الفاظ واپس لیں، الیکشن کمیشن کے وکیل منشی ہیں۔ ہمارے ساتھ سیاسی میدان میں مقابلہ کریں، پھر جواب دیتے ہیں۔

عدالت نے الیکشن کمیشن کو عمران خان کے وکلاء کو تصدیق شدہ کاپیاں فراہم کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت میں وقفہ کردیا۔ بعد ازاں عمران خان کی آج طبی بنیادوں پر حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی۔ عمران خان پر آج بھی فرد جرم عائد نہ ہوسکی۔

متعلقہ خبریں