سندھ پولیس اصلاحات : اپوزیشن کا بل کو عدالت میں چیلنج کرنے کا اعلان

کراچی: سندھ پولیس اصلاحات بل پر اپوزیشن اور حکومت میں اتفاق نہ ہوسکا، اپوزیشن  نے بل کو عدالت میں چیلنج کرنے کا اعلان کردیا۔

سندھ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر فردوس شمیم میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ جب پولیس آرڈر ترمیمی بل متعارف ہوا تھا تو ہمارا ماتھا ٹھنکا تھا، واضع ہوگیا کہ سندھ کارڈ کھیلنے والوں کی طرف سے یہ ایک سازش ہورہی ہے، ناچ نہ جانے آنگن ٹیڑا کی مثال قائم کی گئی، غیر قانونی اور غیر اخلاقی اقدام اختیار کرکے قانون بنایا گیا یہ قانون ہمیں قبول نہیں اسمبلی میں اپوزیشن اور عدالت میں چیلنج کریں گے۔

سعید غنی نے کہا کہ اپوزیشن نے جتنا ساتھ دیا، ان کے مشکور ہیں، حتی الامکان کوشش کی اپوزیشن کی تجاویز شامل کریں مگر وہ معاملے کو متنازعہ بناکر عدالت جانا چاہتے ہیں۔

انہوں نے  کہا کہ اپوزیشن خود بھی کلیئر نہیں ہیں، اس قانون کو پڑھتے بھی نہیں اور نہ ہی سمجھتے ہیں، کوئی مانے یا نہ مانے مگر اجلاس کے منٹس مانگنے والوں کا آڈیو رکارڈ بھی موجود ہے۔

ایم ایم اے کے رکن عبدالرشید نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ سندھ پولیس قانون اسسی فیصد بہتر ہے، اپنے متعلق اپوزیشن لیڈر کے بغل بچہ لفظ کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے جتنی تجاویز اپوزیشن کی شامل کی ہیں اس سے تو لگتا ہے بل ان کی تجاویز پر مرتب ہواہے مگر احتجاج و بائیکاٹ سمجھ سے بالاتر ہے۔