جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

وفاقی حکومت کی بڑی غفلت، پیٹرولیم ایکٹ کو بنگلادیش میں بھی نافذ العمل قرار دے دیا

پیٹرولیم ایکٹ

پشاور : وفاقی حکومت نے پیٹرولیم ایکٹ کا دائرہ کار بنگلہ دیش تک پھیلا دیا، جس پر عدالت برہم ہوگئی۔

پشاور ہائیکورٹ میں پیٹرول پمپس پر چھاپوں کیخلاف کیس کی سماعت جسٹس مسرت ہلالی اور جسٹس ناصر محفوظ نے کی۔

دوران سماعت وفاقی حکومت کی قانون سازی میں بڑی غفلت سامنے آگئی۔ پیٹرولیم ایکٹ کو بنگلادیش میں بھی نافذ العمل قرار دیا گیا ہے۔

جسٹس مسرت ہلالی نے ریمارکس دیئے کہ عجیب بات ہے کہ یہاں کے لوگ بنگلادیش کیلئے قوانین بناتے ہیں، 1934 کے قانون میں 1986 میں ترمیم کی گئی اور بنگلادیش تک توسیع دی گئی۔ بنگلادیش اب ایک خود مختار ملک ہے، آپ کیسے قانون سازی کرسکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں :  وزیر اعظم کا بنگلہ دیشی ہم منصب سے ٹیلی فونک رابطہ، کورونا اقدامات پر تبادلہ خیال

عدالت نے کہا کہ قانون سازی میں نقل کی ہے، لیکن عقل کا استعمال نہیں ہوا۔ ہمیں سمجھائیں یہ کیسے قانون سازی کی گئی۔ ایڈووکیٹ جنرل اور اٹارنی جنرل آفس بھی معاملے سے بے خبر نکلے۔

جسٹس ہلالی نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں سمجھائیں ورنہ قانون پر بنگلادیش میں عملدرآمد کیلئے نوٹس دیں گے۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے کہا کہ میرے علم میں نہیں، قانون کو دیکھ کر کچھ بتا سکتا ہوں۔ عدالت نے جواب طلب کرتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

متعلقہ خبریں