جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

گیس بحران : سندھ حکومت نے وفاق سے سوٸی سدرن گیس کمپنی کا کنٹرول مانگ لیا

سوٸی سدرن گیس کمپنی

کراچی : امتیاز شیخ کا کہنا ہے کہ آٸین کا آرٹیکل 158، ٹو تھرڈ پیداوار پر استعمال کا پہلا حق دیتا ہے، سوٸی سدرن گیس کمپنی ہمارے حوالے کریں۔

سندھ بھر میں گیس کی قلت کے باعث سندھ حکومت کے محکمہ توانائی نے وفاقی وزیر حماد اظہر کو لکھے گئے خط میں کہا ہے کہ وفاق کے پاس صلاحیت نہیں تو سوٸی سدرن گیس کمپنی ہمارے حوالے کریں۔ ہم گیس کی پیداوار اور درست تقسیم کرکے دکھا سکتے ہیں۔

صوباٸی وزیر تواناٸی سندھ امتیاز شیخ نے خط میں کہا کہ آٸین کا آرٹیکل 158، ٹو تھرڈ پیداوار پر استعمال کا پہلا حق دیتا ہے۔ صوبے کو گیس پیدا کرنے کے باوجود حق سے محروم کیا جارہا ہے۔ گزشتہ تین سالوں سے تسلسل کے ساتھ سندھ کی گیس پر ڈاکہ ڈالا جارہا ہے۔

خط کے مطابق نومبر کے مہینے سے سندھ میں گیس کی بندش اور لو پریشر کے نتیجے تجارتی حب کراچی کے مکین مشکلات کا شکار ہیں۔ کراچی کے شہری ملازمتوں، اور بچے بھوکے اسکول جانے پر مجبور ہوگٸے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں : ٹوبہ ٹیک سنگھ : گیس لیکج کے باعث آگ لگنے سے سات افراد زندگی ہار گئے

خط میں کہا گیا کہ کراچی سمیت سندھ کے شہری لکڑی، کوٸلے اور سلنڈر استعمال کرنے پر مجبور ہیں اور ان کی جانوں کو خطرات لاحق ہوچکے ہیں۔ دو ماہ سے سندھ کا سی این جی سیکٹر بند ہے اور لاکھوں دیہاڑی مزدور بیروزگاری ہوگٸے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سی این جی بندش سے کراچی میں رکشہ، ٹیکسی اور پبلک ٹرانسپورٹ بند ہوکر رہ گٸے ہیں۔ سندھ کا صنعتی پہیہ جام، مزدور بیروزگار، برآمدی کارخانے آرڈرز پورے کرنے میں ناکام اور ملک بیرونی آمدن سے محروم ہوچکا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سندھ کی گیس ضرورت 750 اور فراہمی 560 ایم ایم سی ایف ڈی دی جارہی ہے۔  آٸین پاکستان گیس پیدا کرنے والے صوبے کو استعمال کا ترجیحی حق دیتا ہے۔ سندھ کے ساتھ آرٹیکل 158 کے مطابق شدید زیادتی کی جارہی ہے۔

صوبائی وزیر نے کہا کہ گیس بحران نے صوبے کی گھریلو، تجارتی اور صنعتی زندگی اجیرن کردی اور معاشی سرگرمیوں محدود کردیا ہے۔ اپنے جاٸز حق سے محرومی پر شدید احتجاج کرتے ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں کہ ہمیں اپنا جاٸز حق فراہم کیا جاٸے۔

متعلقہ خبریں