جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

مریم نواز کا پیپلز پارٹی سے اگر لو افیئر تھا تو ان کا تھا، ہمارا نہیں : سلیم مانڈوی والا

مریم نواز کا پیپلز

اسلام آباد : سلیم مانڈوی والا کا کہنا ہے کہ مریم نواز کا پیپلز پارٹی سے اگر لو افیئر تھا تو ان کا تھا، ہمارا نہیں تھا۔

احتساب عدالت اسلام آباد میں کڈنی ہلز ریفرنس کیس کی سماعت احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے کی۔ سلیم مانڈی والا نے حاضری لگائی۔ ملزمان پر فرد جرم ایک دفعہ پھر مؤخر کر دی گئی۔

دوران سماعت احتساب عدالت کے جج نے کہا کہ دو ملزمان بیمار ہیں وہ نہیں آرہے۔ وکیل نے بتایا کہ ملزمان کراچی سے آتے ہیں۔

جج نے استفسار کیا کہ اب کیا کریں ایک ملزم کو کورونا ہے اس کو بلا لیں؟ وکیل نے کہا کہ نہیں نہیں کورونا والے کو بلایا تو سب مر جائینگے۔ ملزم اعجاز ہارون کی 22 جون کو کراچی میں پیشی ہے۔ عدالت نے کیس کی سماعت 23 جون تک ملتوی کر دی ہے۔

یہ بھی پڑھیں : ججز کو پریشرائز کرکے اپنی مرضی کے فیصلے نہ لیے جائیں : مریم نواز

پیپلز پارٹی رہنماء اور سابق ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈوی والا نے پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ آج بھی تاریخ دی گئی ہے۔ کچھ افراد عدالت میں پیش نہیں ہو سکے۔ آج دسویں پیشی ہے، ہم عدالت آ رہے ہیں، لیکن نتیجہ صفر ہے۔ نیب کی جانب سے کوئی ثبوت پیش نہیں کئے گئے۔

انہوں نے کہا کہ نیب کی کارروائی لوگوں کو عدالت میں بلاکر خراب کرنا ہے۔ نیب صرف پلی بارگین کے لئے رہ گئی ہے۔ عدالتوں میں نیب کچھ ثابت نہیں کر سکا۔ میں صرف اپنے کیس کی بات نہیں کر رہا۔ لوگوں کو بلا کر ہراساں کیا گیا۔ نیب کی تمام شکایات کا کو پارلیمان میں اٹھائیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ چیئرمین نیب بتائیں کہ وہ کس کے دباؤ میں ہیں، چیئرمین نیب پارلیمان میں آکر ہمیں آگاھ کریں، شاید وہ پارلیمان میں آنا نہیں چاہتے۔

سلیم مانڈوی والا نے کہا کہ شاہد خاقان عباسی نے بھی جو کیا وہ اس سے امید نہیں تھی۔ مریم نواز کا اگر لو افیئر تھا تو ان کا تھا، ہمارا نہیں تھا۔ پیپلز پارٹی کے ساتھ لو افیئر انہوں نے ہی شروع کیا تھا، ہم نے نہیں کیا تھا۔

پی پی رہنما کا کہنا تھا کہ پی ڈی ایم کو سیریس نہ لیں، سیاست ختم نہیں ہو گی۔ سیاست زوروں میں ہے ملاقاتیں بھی ہو رہی ہیں۔ بجٹ میں اپوزیشن ایک ہی صفحہ پر ہیں۔

متعلقہ خبریں