جی ٹی وی نیٹ ورک
صحت

گرمیوں میں سر درد کا سامنا رہتا ہے تو یہ کام کیجئے اور سر درد سے نجات حاصل کریں

گرمیوں میں سر درد کی علامات :

جب موسم شدید گرم ہوتو یہ بہت سے مسائل کی وجہ بن جاتا ہے اس میں سے ایک مسئلہ سردرد کا ہے ۔جوں جوں سورج کی تپش تیز ہوتی ہے، گرمی میں شدت آجاتی ہے۔

موسم گرما میں ہمارے ملک کے کئی شہروں میں درجہ حرارت چالیس ڈگری سے زیادہ رہتا ہے اور اسی حالت میں لوگوں کو اپنی ملازمت اور دیگر کاموں کے لیے سورج کی گرم گرم شعاعوں میں نکلنا پڑتاہے۔ تمام تر حفاظتی اقدامات کے باوجود بھی کئی لوگ گرم موسم کی شدت سے متاثر ہوجاتے ہیںاور سرد رد میں مبتلا ہو جاتے ہیں۔

 

گرمیوں میں سر درد کی علامات :

 

گرمی میں سر درد کی علامات میں سر کے دونوں طرف ہلکے سے درمیانی شدت کا درد ہونا، جسمانی سرگرمی کے ساتھ سر درد بڑھتا ہے اور مستقل سر درد ہونا شامل ہو سکتا ہے۔

حفاظتی اقدامات کیا ہوسکتے ہیں  :

گرمی کے سر درد کو روکنےکے لیے ایک حفاظتی اقدام یہ بھی ہے کہ پانی زیادہ سے زیادہ مقدار میں پانی پیا جائے اور گرم موسم میں زیادہ جسمانی سرگرمیوں سے گریز کیا جائے۔

جیسے ہی آپ کو یہ احساس ہوکہ آپ کو سر درد ہو رہا ہے، توفوری طور پر مندرجہ دیل حفاظتی اقدامات کیے جائیں تاکہ طبیعت زیادہ خراب نہ ہو:

ٹھنڈی جگہ ڈھونڈ کر آرام کریں۔

ہائیڈریشن کے لیے وقفے وقفے سے پانی اور ٹھنڈے مشروبات پئیں۔

ایسے پھل کھائیں جو میگنیشیم سے بھرپور ہوں، جیسےکہ کیلا، انناس، تربوز، خوبانی وغیرہ۔

خوراک میں دہی اور مکھن کا استعمال بھی آپ کو سرد رد سے محفوظ رکھے گا۔

اکثر لوگ گرمیوں میں مچھلی کے استعمال سے اجنتاب کرتے ہیں، تاہم سائنسی بنیادوں پر ایسا کرنے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔ سامن مچھلی اومیگا تھری فیٹی ایسڈ سے بھرپور ہوتی ہے، اس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ اس کھانے سے آپ سردرد سے محفوظ رہ سکتے ہیں۔

 

اس بارے میں جانئے  : سلاجیت کے پوشیدہ فوائد 

 

 

دیگر احتیاطی تدابیر یہ ہوسکتی ہے :

 

سردرد کم نہ ہو رہا ہوتو کمرے کی روشنیاں بجھا دیں اور کوشش کریں کہ کمرے سے باہر کی آوازیں یا روشنی کمرے کے اندر نہ آئیں۔

تیزدھوپ میں ہروقت آنکھوں پرسیاہ چشمہ لگائیں، رات کوتمام ڈیوائس یعنی ٹی وی، لیپ ٹاپ یا ٹیبلٹ وغیرہ بند کر کے بھرپور نیند لیں۔

سر درد دور کرنے کے لیے آپ آئس کیوبز بھی استعمال کرسکتے ہیں۔ ان آئس کیوبز کو ایک کاٹن کے کپڑے میں لپیٹ کر کر گردن اور سر کاآہستہ آہستہ مساج کریں۔

روزمرّہ کے اسٹریس (ذہنی دباؤ) کو اپنے اُوپر حاوی نہ ہونے دیں، ایسی صورت میں آدھے سر کا درد بھی کم کیا جاسکتا ہے۔

میگرین ہونے کی صورت میں واکنگ، سوئمنگ یا سائیکلنگ کے ذریعے مدد لی جاسکتی ہے۔ ایکسر سائز دردِ شقیقہ کی شکایت دور کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔

اگر درد کی شدت بہت زیادہ ہو تب سر کے گرد ایک بینڈ، جسے ہیڈ بینڈکہا جاتا ہے، باندھ لیں۔

نوٹ : سلاجیت کے استعمال سے پہلے معالج سے ضرور مشورہ کریں۔

 

متعلقہ خبریں