جی ٹی وی نیٹ ورک
اہم خبر

75 سال میں دعوے بہت ہوئے، عمل نہیں، اس حمام میں ہم سب ننگے ہیں : وزیر اعظم

اس حمام میں

اسلام آباد : شہباز شریف کا کہنا ہے کہ ذاتی مفاد نہ چھوڑا تو ہم سرکس میں گھومتے رہیں گے، کئی منصوبے التواء میں ڈالے گئے، کس سے جواب تلاش کریں؟ اس حمام میں ہم سب ننگے ہیں۔ عمل سے ہمارا دامن خالی ہے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے کنونشن سینٹر میں کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کانفرنس سے خطاب میرے لیے اعزاز کا باعث ہے۔ ہماری اصل منزل خود انحصاری کی ہے۔ ہمیں آئی ایم ایف سے جلد 2 ارب ڈالرز مل جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ اتحادی حکومت پاکستان کے چاروں صوبوں پر محیط ہے۔ کسی فیصلے پر ان کی مہر سے فیصلے کو تقویت ملتی ہے۔ ہم سب نے مل کر اس کو قبول کیا، انشا اللہ اس ذمہ داری کو نبھائیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ریکوڈک میں اربوں روپے کا خزانہ دفن ہے۔ ابھی تک ہم نے ایک دھیلہ نہیں کمایا، مگر اربوں روپے ضائع ہوگئے۔ مقدمات اور دیگر مد میں ہم نے اربوں روپے ضائع کیے۔ حقیقت یہ ہے خود انحصاری کسی بھی قوم کی آزادی کی پہچان ہوتی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ بنگلادیش میں بہت بڑا انفراسٹرکچر بنایا گیا، جس پر 6 ارب ڈالر لگائے گئے۔ وہ کریڈٹ لے رہے ہیں کہ آئی ایم ایف، ورلڈ بینک کی سپورٹ کے بغیر بنایا۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ پاکستان آج قرضوں کے بوجھ تلے دب چکا ہے۔ حویلی بہادر شاہ پراجیکٹ کا پیسہ پاکستانی قوم کا پیسہ ہے۔ 1250 میگاواٹ بجلی کا منصوبہ ہے۔ یہ آج سے ڈھائی سال پہلے مکمل ہوجانا چاہیئے تھے۔ اس منصوبے کو ضائع کیا گیا، جس سے لاکھوں لوگوں کو روزگار ملنا تھا۔

یہ بھی پڑھیں : آئی ایم ایف نے ساتوں اور آٹھویں جائزے کا میمورنڈم پاکستان کو دے دیا : مفتاح اسماعیل

انہوں نے کہا کہ اسی طریقے سے 3 اور منصوبے ہیں جو امریکا کی کمپنی نے لگائے تھے۔ یہ چاروں منصوبے نواز شریف کے دور میں لگے تھے۔ ایسا نہیں کہ پیسے نہیں، اپنا پیٹ کاٹ کر ان کیلئے پیسے مہیاء کیے جاسکتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ نواز دور میں جو قطر سے گیس کا معاہدہ ہوا۔ اس پر شکوک و شہبات کیے گئے۔ نہ لانگ ٹرم منصوبہ بنایا نہ ہی گیس لی۔ پورا یورپ اس گیس کو خرید رہا ہے، ہم نے خریدی ہی نہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ گوادر میں جو اسپتال گرانٹ سے بننا تھا، وہ ابھی تک نہیں بن سکا ہے۔ گوادر ایئرپورٹ بھی گرانٹ سے بننا تھا۔ وہ بھی دور دور تک بنتا نظر نہیں آتا۔ کئی سال پہلے پولان ایرانی حکومت نے ٹرانسمیشن لائن کو مکمل کیا۔  پولان سے 26 کلو میٹر گوادر ہے 5 سال گزر گئے ہم وہ لائن نہیں ڈال سکے۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ بریک واٹر منصوبے کی فزیبلٹی 3 سال سے مکمل ہے، کسی نے ہاتھ نہ لگایا۔ مجھے بتائیں کہ اس کا جواب آپ کس سے تلاش کریں گے؟ کہنا چاہتا ہوں کہ اس حمام میں ہم سب ننگے ہیں۔ یہ مجھ سمیت سب کی ذمہ داری تھی۔

انہوں نے کہا کہ 75 سال میں دعوے تو بہت ہوئے مگر عمل سے ہمارا دامن خالی ہے۔ ذاتی مفاد نہ چھوڑا تو ہم سرکس میں گھومتے رہیں گے۔ کوئلہ، تیل اور گیس پچھلے دور میں مہنگی ہوچکی تھی۔ چند ہفتے قبل پاکستان میں خوردنی تیل کا خطرہ منڈلانے لگا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ میں نے انڈونیشیا کے صدر کو خط لکھا 3 دن بعد فون پر بات ہوئی۔ انڈونیشیا کے صدر نے کہا اسی وقت حکم دے دیتا ہوں۔ ہمارا وزیر اپنے خرچے پر جکارتہ گیا، جب جہاز چل پڑے تو یہ واپس آیا۔ جب کام کرنا ہو تو بے پناہ دروازے کھل جاتے ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ آج ہم بہت مشکلات میں گھرے ہوئے ہیں۔ ہم پچھلی حکومت پر بڑی آسانی سے ملبہ ڈال دیتے ہیں۔ آگے کام کرتے نہیں۔ کل فیصلہ کیا جولائی میں امید ہے افغانستان سے کوئلہ آنا شروع ہوجائے گا۔ ٹرانزیکشن پاکستانی روپے میں ہوگی۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ رئیل اسٹیٹ اس ملک کا حصہ ہے، لیکن سٹے بازی نہیں ہونی چاہیئے۔ رئیل اسٹیٹ کو ہمارے لیے ایسٹ بنائیں گے۔ تو ہم سپورٹ کریں گے۔ دیکھنا ہے این او سی راج کو کس طرح ختم کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سپر ٹیکس کی مد میں 230 ارب روپے آئیں گے، جو پاکستان کی ترقی، معیشت، خوشحالی پر خرچ ہوں گے۔

متعلقہ خبریں