جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

مولانا کے غبارے میں ہوا بھر گئی ہے، جلد پھٹنے جا رہا ہے : شیخ رشید

مولانا کے غبارے

راولپنڈی : شیخ رشید نے کہا ہے کہ انہیں جنگ نظر آرہی ہے، سرحدوں پر غیر اعلانیہ جنگ جاری ہے۔ میرا شہباز شریف سے رابطہ ہے، مولانا فضل الرحمان کے غبارے میں بہت ہوا بھر گئی ہے لیکن یہ غبارہ جلد پھٹنے جارہا ہے۔

راولپنڈی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے شیخ رشید کا کہنا تھا کہ غیر اعلانیہ جنگ جاری ہے۔ سرحدوں پر فوجیں آمنے سامنے کھڑی ہیں۔ مجھ سے کوئی رابطے میں نہیں ہے، صرف شہباز شریف سے رابطہ ہے۔ مولانا فضل الرحمان پہلی بار سیاسی جماعتوں کی قیادت کرنے جارہے ہیں۔ ان کے غبارے میں بہت ہوا بھر گئی ہے لیکن یہ غبارہ جلد پھٹنے جارہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : بھارتی آرمی چیف کا جھوٹ، غیر ملکی سفارت کاروں کا ایل او سی کا دورہ

پاک بھارت کشیدگی

پاکستان کو سرحدوں پر خطرناک حد تک چیلنجز درپیش ہیں اور وہاں غیر اعلانیہ جنگ جاری ہے۔ سرحدوں پر فوجیں آمنے سامنے کھڑی ہیں، کلسٹر بم بھی استعمال ہو چکے ہیں اور بھارت کو پتہ ہے کہ یہ جنگ ہو گی تو پھر ایٹمی جنگ ہو گی۔

شیخ رشید نے کہا کہ مودی بہت خطرناک ہے، وہ ہندو بالادستی اور سلامتی کونسل کی مستقل رکنیت چاہتا ہے، وہ جنگ دیکھ رہے ہیں اور مودی کے عزائم کو بھانپ چکے ہیں۔ مودی چاہتا ہے پاکستان کشکول لے کر کھڑا رہے اور سری لنکا و مالدیپ بن جائے۔ مودی پاکستان کا پانی بند اور فصلوں کو اجاڑنے کی دھمکی دے رہا ہے اور بھارت میں ہندوتوا کا نظام لا رہا ہے۔

وزیر ریلوے نے کہا کہ میں پاگل نہیں کہ بتا چکا ہوں کہ ہمارے پاس پاؤ اور آدھا کلو کے بھی بم ہیں، کوئی غلط فہمی میں نہ رہے، وہ جیسا مرچ مسالہ استعمال کریں گے ہم بھی ویسا کریں گے۔

مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی

شیخ رشید نے کہا کہ (ن) لیگ میں احسن اقبال، خواجہ سعد رفیق، خواجہ آصف اور ایاز صادق سمیت 10 سے 12 بارہ اچھے لوگ ہیں، ان میں میرا دوست شہباز شریف بھی شامل ہے۔ ان کا کہنا تھا امید ہے اچھے لوگوں کی موجودگی میں اچھا فیصلہ ہوگا، مجھ سے کوئی رابطے میں نہیں ہے، یہاں تک کہ چوہدری نثار سے بھی نہیں، صرف شہباز شریف سے رابطہ ہے، امید ہے معاملات بہتر سمت جائیں گے۔

شیخ رشید نے کہا کہ نواز شریف اور زرداری کے کرپشن کے پانچ، پانچ سال کی سزا عوام کو بھگتنی پڑ رہی ہے، آٹا، چینی، گھی کی منہگائی کے ذمہ دار نواز شریف اور آصف زرداری ہیں، عمران خان نہیں۔ عمران خان نے معیشت کا پہیہ چلا دیا ہے۔

مولانا فضل الرحمان کا آزادی مارچ

وزیر ریلوے نے کہا کہ پاکستان کو خطرہ اندر سے ہے سرحدوں سے نہیں لیکن پاکستان کو اندر سے انتشار میں مبتلا کرنے والوں کے ساتھ اچھا سلوک نہیں ہو گا۔

شیخ رشید نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان پہلی بار سیاسی جماعتوں کی قیادت کرنے جارہے ہیں۔ ان کے غبارے میں بہت ہوا بھر گئی ہے لیکن یہ غبارہ جلد پھٹنے جارہا ہے۔ مولانا فضل الرحمان کو مشورہ دیا ہے کہ یہ وقت اس صورتحال کے لیے مناسب نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ امید ہے کل بہتر فیصلہ آئے گا، اگر نہیں آیا تو قانون اپنا راستہ اختیار کرے گا کیونکہ لوگوں کو ڈنڈا بردار جتھوں اور مسلح لوگوں کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑا جا سکتا۔ مولانا صاحب کو فیس سیونگ ملنی چاہیے تاکہ ان کا شوق بھی ہو جائے، سانپ بھی مرجائے اور لاٹھی بھی نا ٹوٹے۔

وزیر ریلوے نے کہا کہ ساری زندگی یہی سنا کہ اپوزیشن نکلتی ہے تو استعفے کا مطالبہ ہی کرتی ہے، اب معیشت کا پہیہ چل پڑا ہے، ایسے میں انتشار مناسب نہیں ہے۔ مولانا فضل الرحمان کا مسئلہ کشمیر سے کوئی واسطہ نہیں ہے، وہ دو سال سہولتیں لینے کے لیے کشمیر کمیٹی کے سربراہ رہے۔

انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان گولڈن ٹیمپل تو جا سکتے ہیں لیکن مزار قائد نہیں، مولانا گولڈن ٹیمپل کے لنگر خانے میں بھی جا سکتے ہیں لیکن مزار اقبال پر نہیں، ان کے دہرے معیار ہیں۔

متعلقہ خبریں