مولانا ورکروں کو پارلیمان میں جانے کی خواہش کی بھینٹ نہ چڑھائیں : فردوس عاشق

فردوس عاشق اعوان پارلیمان میں

اسلام آباد : فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ مولانا مظلوم ورکروں کو اپنی پارلیمان میں جانے کی خواہش کی بھینٹ نہ چڑھائیں۔ انہیں بے رحم سرد موسم کے حوالے کرنے کی بجائے باعزت گھر واپسی کی “آزادی” دیں۔

وزیر اعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے مولانا فضل الرحمان اور ان کے آزادی مارچ کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

سماجی میڈیا ٹوئٹر پر کی گئی ٹوئٹ میں انہوں نے کہا کہ مولانا! آپ اور آپ کے ہم نواء جبری  تسلط کی منفی سوچ ترک کریں اور جمہوری رویہ اپنائیں۔

فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ آپ  کو رنج ہے کہ ملک میں چند خاندانوں کی بجائے پہلی بار حقیقی عوامی راج کیوں قائم ہوا؟ آپ کی پریشانی یہ ہے کہ وزیراعظم عمران خان معیشت درست سمت ڈال کر عوام کا روزگار اور کاروبار چلانا چاہتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں : مولانا صاحب! اگر دھاندلی ہوئی تھی تو آپ نے صدر کا الیکشن کیوں لڑا؟ فردوس عاشق

معاون خصوصی نے کہا کہ مولانا مظلوم ورکروں کو اپنی پارلیمان میں جانے کی خواہش کی بھینٹ نہ چڑھائیں۔ انہیں بے رحم سرد موسم کے حوالے کرنے کی بجائے باعزت گھر واپسی کی “آزادی” دیں۔


انہوں نے کہا کہ غریبوں کے بچوں، بزرگوں کی صحت اور سلامتی خطرے میں نہ ڈالیں۔ آئین اور جمہوریت کے منافی مطالبے کرکے نظام کو نقصان نہ پہنچائیں۔

ان کا کہنا تھا کہ چار سال صبر فرمائیں اور مظلوم کشمیریوں کے لئے آواز بلند کر کے دس سال کشمیر کمیٹی کے بطور چیرمین پروٹوکول لینے کا قرض اتاریں۔