جی ٹی وی نیٹ ورک
اسلام آباد

وزیرخارجہ کاسلامتی کونسل کو خط، مقبوضہ کشمیر کے سنگین حالات سے آگاہ

وزیرخارجہ

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل اور سلامتی کونسل کے صدر کے نام ایک اور خط میں مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارت کے مظالم سے آگاہ کردیا۔

ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی کی جانب سے جاری بیان وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اور بد ترین صورت حال کو اجاگر کرنے کے سلسلے میں سلامتی کونسل کے صدر اور اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کو توجہ دلاؤ خط لکھا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی سلامتی کونسل کے صدر کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں 5 اگست 2019 کے بعد جاری مظالم پر مسلسل آگاہ کرتے رہتے ہیں کہ یہ صورت حال جنوبی ایشیا میں امن و سلامتی کے لیے خطرے کا باعث ہے۔

دفتر خارجہ کے بیان کے مطابق وزیر خارجہ نے اپنے حالیہ خط میں بھارت کے ان دعوؤں کو مسترد کردیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں صورت حال معمول کے مطابق ہے۔

شہزادہ چارلس اور بورس جانسن کی صحتیابی کیلئے دعا گوہ ہوں: وزیر اعظم

انہوں نے سلامتی کونسل کو بھارت کے چیف آف ڈیفنس اسٹاف کی جانب سے مقبوضہ جموں و کشمیر میں نوجوانوں کے انتہاپسند کیمپوں کے حوالے سے دیے گئے انتہائی غیر ذمہ دارانہ بیان کی طرف توجہ دلاتے ہوئے کہا کہ

بھارت لائن آف کنٹرول میں جنگ بندی معاہدے کی 12 دسمبر 2019 سے مسلسل خلاف ورزی کررہا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے زور دے کر کہا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی بدترین پامالی اور سنگین صورت حال سے عالمی توجہ ہٹانے کے لیے بھارت کی جانب سے جھوٹی کارروائی کا امکان ہے۔

وزیر خارجہ نے اپنے خط میں وزیراعظم نریندر مودی سمیت بھارتی قیادت کے غیر ذمہ دارانہ بیانات کو بھی اجاگر کیا ہے جس میں وہ پاکستان کے خلاف فورس کے استعمال کی دھمکی دے رہے ہیں۔

انہوں نے بھارت کی جانب سے مقبوضہ جموں و کشمیر کی جغرافیائی تقسیم کے اقدامات کو بھی نمایاں کیا اور اسی حوالے سے انہوں نے کشمیریوں کی جائیدادوں پر جبری قبضے اور 6 ہزار ایکڑ زمین غیر کشمیریوں کے حوالے کرنے کو عالمی قانون اور جنیوا کنونشن کی خلاف ورزی قرار دیا۔

متعلقہ خبریں