جی ٹی وی نیٹ ورک
دنیا

ترکی میں 8 ہزار سے زائد ڈاکٹر مستعفیٰ، اسپتال بند ہونے لگے، حکومت پریشان

8 ہزار

انقرہ : ترکی میں 8 ہزار سے زائد ڈاکٹر مستعفیٰ ہوگئے ہیں۔

ادویات کے بعد ڈاکٹروں کے ایک نئے بحران نے سر اٹھا لیا ہے۔ گزشتہ ڈیڑھ سال کے دوران ترکی میں سرکاری اسپتالوں سے منسلک  8 ہزار سے زائد ڈاکٹر مستعفیٰ ہوگئے ہیں۔

اعداد و شمار کے مطابق مستعفیٰ ہونے والے ڈاکٹروں میں سے 10 فیصد دانتوں کے ڈاکٹر ہیں، انہوں نے وزارت صحت سے منسلک طبی مراکز، کلینک اور اسپتالوں میں کام کیا ہے۔ موجودہ صورتحال کے باعث صحت کے کئی مراکز کو بند کردیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : پاکستان، ترکی اور آذربائیجان کے درمیان راہداری پر تجارت شروع

ڈینٹل سنڈیکیٹ کے سربراہ کے مطابق صرف پچھلے سال 2020 کے دوران ایک ہزار سے زیادہ ڈینٹسٹس نے استعفیٰ دینے کے بعد پبلک سیکٹر میں اپنی خدمات ترک کر دی ہیں جس کی وجہ سے اس سال کچھ سرکاری مراکز، کلینکس اور اسپتالوں کو بند کرنا پڑا۔

ترک لیرا کی قیمت میں کمی کے باعث غیر سرکاری اداروں میں کام کرنے والے ڈاکٹر بھی اپنی کم تنخواہوں کی وجہ سے ملازمت چھوڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ڈاکٹرز کی بڑی تعداد غیر ممالک میں اپنی خدمات دینا چاہتے ہیں، یا پھر اپنی کلینک کھول کر اس سے ہی اپنے پیشے کو جاری رکھنے کی خواہش رکھتے ہیں۔

خیال رہے کہ گزشتہ ماہ انکشاف ہوا تھا کہ تین ہزار سے زائد ڈاکٹر ملازمت کے لیے ترکی چھوڑ چکے ہیں۔

متعلقہ خبریں