جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

بغداد میں امریکی فوج کیخلاف’ملین مارچ‘

ملین مارچ

بغداد: عراقی دارالحکومت بغدادمیں امریکی فوج کیخلاف ’ملین مارچ‘ کاانعقاد کیاگیا کثیر تعداد میں  افراد شریک ہوئے اورشہرانسانی سمندرمحسوس ہونے لگا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق عراق میں امریکی افواج کی موجودگی کے خلاف ہونے والے اس احتجاج کی کال عراق کے بااثر رہنما مقتدیٰ الصدر نے دی تھی۔

عراقی دارالحکومت بغداد کے شہریوں نے امریکہ مخالف اپنے ملین مارچ کا آغاز پل الطابقین سے کیا اور اس کا عنوان "انقلاب عشرین عراق” رکھا ہے ۔

مظاہرین اپنے ہاتھوں میں عراقی پرچم اٹھائے ہوئے ہیں اور ایک ساتھ مل کر عراق سے امریکی فوجیوں کے انخلاء کا نعرہ لگا رہے ہیں۔

کرادہ روڈ ، پل حسنین اور  بغداد  کے دیگر علاقوں میں مظاہرین کے عظیم الشان اجتماع کے اطراف کے علاقوں میں بھی مظاہرین کی کثیر تعداد اکٹھا ہے۔

ہوسٹن میں زوردار دھماکا، آدھے میل کا علاقہ لرز اٹھا

غاصب امریکی فوجیوں کے خلاف ہونے والے عراقی عوام کے ملین مارچ میں مختلف بینروں اور پوسٹروں  کے ساتھ عراقی قبائل کی خواتین بچوں ، بوڑھوں اور نوجوانوں کی موجودگی نہایت پرشکوہ اور عظیم الشان ہے۔

بہت سے پوسٹروں اور بینروں پر انگریزی میں "گو آؤٹ امریکا”  لکھا ہوا ہے اور امریکی فوجیوں اور صدر ٹرمپ کو براہ راست مخاطب کرتے ہوئے عراق سے امریکی فوج  کے فوری انخلاء کا مطالبہ کیا گیا ہے-

بعض پوسٹروں اور بینروں پر امریکی صدر ٹرمپ کی ذلت آمیز تصویریں بنی ہوئی ہے جس میں دکھایا گیا ہے کہ ٹرمپ کو کس ذلت کے ساتھ عراق سے باہر نکال دیا گیا ہے ۔

بعض پوسٹروں پر دہشتگرد گروہ داعش کے سرغنہ کی بھی تصویریں چھپی ہوئی ہیں اور ان پر امریکیوں کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا ہوا ہے کہ داعش کو تم نے جنم دیا ہے۔ بہت سے مظاہرین کفن پوش ہیں اور ان کے ہاتھوں میں عراق کا پرچم اور ایسے بینر اور پلے کارڈز ہیں جن پر ٹرمپ اور امریکی حکومت سے نفرت کا اظہار کیا گیا ہے۔

عراق کے اسلامی مزاحمتی گروہوں ، دینی شخصیات اور سیاسی و قومی رہنماؤں نے عراق میں امریکی فوجیوں کی موجودگی کے خلاف مظاہروں کو قومی اقتدار اعلی کا دن جبکہ بعض رہنماؤں نے اسے انیس سو بیس کے انقلاب عشرین اور عراق سے برطانوی سامراج کے ذلت آمیز انخلاء سے مشابہ قرار دیا ہے۔

 

متعلقہ خبریں