مقتدر اداروں کو کہتا ہوں کہ میں آئین کو مانتا ہوں، آپ بھی مانیں : مولانا فضل الرحمان

مولانا فضل الرحمان مقتدر اداروں

کوئٹہ : مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ مقتدر اداروں کو کہتا ہوں میں آئین کو مانتا ہوں آپ بھی مانیں۔ ہماری اداروں سے جنگ کی کوئی پالیسی نہیں۔ اداروں کو بھی آئینی حدود میں رہنا چاہئے۔

جمعیت علماء اسلام (ف) کے امیر مولانا فضل الرحمان نے کوئٹہ میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں حق حاکمیت عوام کی بجائے بیرونی قوتوں کے پاس ہے۔ اداروں کا احترام کرتے ہیں۔ عوام کے حقوق پر کوئی سمجھوتا نہیں کریں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم اپنے آباؤ اجداد کی میراث کے امین ہیں۔ امریکہ و دیگر قوتوں کی بالادستی تسلیم نہیں کرتے۔

انہوں نے بتایا کہ جنرل مشرف نے مجھے کہا کہ آپ کیوں امریکا کی غلامی نہیں مانتے۔ میں نے کہا آپ کے بزرگوں نے غلامی اور مجھے میرے بزرگوں نے غلامی کے خلاف لڑنے کا راستہ بتایا۔

یہ بھی پڑھیں : استعفیٰ ان کا باپ بھی دے گا کیونکہ ان کے مدمقابل ہم ہیں، مولانا فضل الرحمن

مولانا فضل الرحمان نے واضح کیا کہ ہم سلیکٹڈ حکومت کو نہیں مانتے، ایسے لوگوں سے لڑنا جانتے ہیں۔ ہم غلاموں کے سامنے سر نہیں جھکائیں گے۔

امیر جے یو آئی نے کہا کہ مقتدر اداروں کو کہتا ہوں میں آئین کو مانتا ہوں آپ بھی مانیں۔ ہماری اداروں سے جنگ کی کوئی پالیسی نہیں۔ اداروں کو بھی آئینی حدود میں رہنا چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں مہنگائی کا طوفان ہے۔ وزراء 17 روپے کلو ٹماٹر اور 5 روپے مٹر بتا کر عوام کا مذاق اڑا رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ عمران خان نے ایک کروڑ نوکریوں کی امید دلائی۔ عمران خان نے کہا یورپ کے لوگ یہاں نوکریوں کیلئے آئیں گے۔ ایک کروڑ نوکریوں، یورپی لوگوں کی نوکریوں کے لیئے آنے کی باتیں دم توڑ چکی ہیں۔ ملک کے استحکام اور عوام کے حقوق کی جنگ جاری رہے گی۔

مولانا فضل الرحمان نے خطاب کے دوران ‘‘حکومت نہ منظور’’ کے نعرے بھی لگوائے۔