نواز شریف اپنی پلیٹیں ٹھیک کروانے گئے اور اپنے چمچے یہیں چھوڑ گئے، فیاض الحسن

نواز شریف

لاہور: فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ شہباز شریف، نواز شریف کی پلیٹیں ٹھیک کروانے گئے، اپنے چمچے اور کڑچھے یہیں چھوڑ گئے جو مسلسل کھڑک رہے ہیں۔

صوبائی وزیر برائے اطلاعت فیاض الحسن چوہان نے اویس لغاری کی پریس کانفرنس پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ یہی اویس لغاری اور عظمیٰ بخاری شریف برادران کو سکیورٹی رِسک اور کرپشن کے بے تاج بادشاہ کہا کرتے تھے، ن لیگ کی آج کی پریس کانفرنس کھسیانی بلی کھمبا نوچے کی اعلیٰ مثال بن گئی ہے۔

اویس لغاری کی پریس کانفرنس کے جواب میں فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ شہباز شریف، نواز شریف کی پلیٹیں ٹھیک کروانے گئے، اپنے چمچے اور کڑچھے یہیں چھوڑ گئے جو مسلسل کھڑک رہے ہیں۔

فیاض الحسن چوہان نے کہا کہ آج یہ کس منہ سے آلِ شریف کی نمائندگی اور تعریفیں کر رہے ہیں، کیا یہ حقیقت نہیں کہ پرویز الٰہی نے شہباز شریف کو 2002 میں 100 ارب کے پراجیکٹس دیئے؟کیا یہ حقیقت نہیں کہ کرپشن اور منی لانڈرنگ کی پنجاب سپیڈ نے اپنے 10 سالہ دور میں دو دفعہ کئی سو ارب کا قرضہ ری شیڈول کروایا۔

یہ بھی پڑھیں: فضل الرحمن کی کمزوری سوجی کا حلوہ اورنوٹوں کا جلوہ ہے، فیاض الحسن

انہوں نے مزید کہا کہ کیا یہ حقیقت نہیں کہ 2018 میں شہباز شریف نے 1200 ارب کا مقروض صوبہ سردار عثمان بزدار کے حوالے کیا اور کیا یہ حقیقت نہیں کہ پنجاب میں ان کی بنائی ہوئی 56 کمپنیاں، تین میٹرو منصوبے اور اورنج لائن ٹرین خسارے کی حالت میں سردار عثمان بزدار کے حوالے کی گئیں۔اس کے باوجود سردار عثمان بزدار نے کفایت شعاری اور انتظامی صلاحیتوں سے پنجاب کو منافع بخش صوبہ بنایا۔

صوبائی وزیر برائے اطلاعت نے کہا کہ ن لیگ کی آج کی پریس کانفرنس کھسیانی بلی کھمبا نوچے کی اعلیٰ و ارفع مثال ہے۔ لندن کے 1ہائیڈ پارک کیس میں 38 ارب پاکستان کو دینے کے فیصلے کے بعد شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو چُلو بھر پانی میں ڈوب مرنا چاہئیے۔

فیاض الحسن نے کہا کہ آل پاکستان لوٹ مار ایسوسی وزیرِ اعظم عمران خان اور وزیرِ اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار پر تنقید کے بجاۓ اپنی کرپشن کی کھائی ہوئی گاجروں کے مروڑوں کے تدارک کا بندوبست کریں۔ 2019۔20 کی پہلی سہ ماہی میں پنجاب کا منافع 75 ارب تھا۔