جی ٹی وی نیٹ ورک
اہم خبر

آبادی بڑھنے سے بیروزگاری، تعلیم اور صحت کے فقدان جیسے مسائل جنم لیتے ہیں: بلاول زرداری

آبادی بڑھنے سے بیروزگاری، تعلیم اور صحت کے فقدان جیسے مسائل جنم لیتے ہیں: بلاول زرداری

کراچی: بلاول بھٹو زرداری نے کہا آبادی بڑھنے سے بیروزگاری، تعلیم اور صحت کی سہولیات کے فقدان جیسے مسائل جنم لیتے ہیں۔

پی پی پی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے آبادی کے عالمی دن پر پیغام دیتے ہوئے کہا کہ ایک طرف وہ ممالک ہیں جہاں فرٹیلٹی ریٹ کم ہے دوسری جانب ایسے بہت سارے ترقی پذیر ممالک ہیں، جہاں فرٹیلٹی ریٹ زیادہ ہونے کے باعث ایک چیلنج جیسی صورتحال ہے ایسے حالات کسی بھی ملک میں بیروزگاری، تعلیم اور صحت کی سہولیات کے فقدان جیسے مسائل کو جنم دیتے ہیں۔

انھوں نے کہا ہے کہ پاکستان کا شمار ان ممالک میں ہوتا ہے، جہاں فرٹلٹی ریٹ بہت زیادہ اور مانع حمل تدابیر پر عمل بہت کم ہے اس کا نتیجہ آبادی میں اضافے کی شکل میں نکلتا ہے۔

.ان کا کہنا ہے کہ سندھ حکومت آبادی میں توازن لانے کے معاملے پر ملکی سطح پر فرٹیلٹی اور خاندانی منصوبہ بندی کے سلسلے میں اٹھائے جانے والے اقدام پر تعاون کر رہی ہیں

بلاول بھٹو نے کہا پیپلز پارٹی ایسے اقدامات سے کمٹڈ ہے،  جس کی مشترکہ مفادات کونسل کی سفارشات ہیں، یہ سفارشات وفاقی و صوبائی سطح پر ٹاسک فورسز کے قیام، خاندانی منصوبہ بندی اور تولیدی صحت کی خدمات تک آبادی کی رسائی کو یقینی بنانے پر مشتمل ہیں اور مالی معاونت، نئی قانون سازی کرنا، ایڈووکیسی اور کمیونیکیشن کے سلسلے میں اقدام اٹھانا بھی سفاتشات میں شامل ہیں اس کے علاوہ ان سفارشات میں نصاب اور تربیت پر مبنی تعلیم دینا، محفوظ مانع حمل اشیاء کو یقینی بنانا، اور رائے عامہ ہموار کرنے والوں اور علماء کی حمایت بھی شامل ہے۔

پیپلز پارٹی کے چئیرمین نے پیغام میں کہا ہے کہ یہ دیکھ کر افسوس ہوتا ہے کہ سپریم کورٹ کے حکم کے باوجود سلیکٹڈ وزیراعظم پاپولیشن کے متعلق ٹاسک فورس کی صدارت کرنے کے لیئے تیار نہیں ہیں، مذکورہ ٹاسک فورس کے ہونے والے چاروں اجلاسوں کی صدارت صدر مملکت نے کی ،اس طرح وسائل اور عملدرآمد کے متعلق سی سی آئی کی سفارشات پر من و عن عملدرآمد ممکن نہیں ہوسکا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان کا وزیراعظم سلیکٹڈ، نالائق اور بزدل ہے، جو کشمیر کیلئے بات نہیں کرسکتا : بلاول

پی پی پی کے چیئرمین کا کہنا ہے کہ پاپولیشن فنڈ کے لئے وفاقی حکومت کی جانب سے 10 ارب روپئے مختص کیئے جانے تھے لیکن تاحال صرف ایک ارب روپے رکھے جا سکے ہیں، پاکستان پیپلز پارٹی اور اس کی سندھ حکومت آبادی میں توازن اور زچہ و بچہ کی صحت کے سلسلے میں قائدانہ کردار ادا کر رہی ہیں جبکہ وزیر اعلی سندھ آبادی کے متعلق ایک ملٹی سیکٹورل ٹاسک فورس کی سربراہی کرتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا سندھ  وہ پہلا صوبہ تھا، جس نے 2015 میں فیملی پلاننگ کے سلسلے میں اپنا کوسٹڈ امپلیمنشن پلان تیار کیا، لیڈی ہیلتھ ورکرز پروگرام کی افرادی قوت کا فوکس اب ایک بار پھر خاندانی منصوبہ بندی پر مرکوز کیا گیا ہے،لیڈی ہیلتھ ورکرز پروگرام کو وزیراعظم شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے متعارف کرایا تھا یہ پروگرام بڑھتی ہوئی آبادی کو کنٹرول کرنے کے اور ضرورتمند خواتین کی معاونت کرنے کے متعلق پی پی پی کے عزم کا عکاس ہے۔

یہ بھی پڑھیں: آر یا پار والے پاؤں پکڑنے کو تیار ہیں، حکومت گرانے کیلئے پیپلز پارٹی کافی ہے : بلاول

بلاول زرداری نے کہنا ہے کہ سابق صدر آصف زرداری کی زیرِ قیادت تاریخی 18 ویں آئینی ترمیم کے بعد اب صحت اور بہبودِ آبادی کے محکمے باضابطہ مربوط و فعال ہیں، حکومتِ سندھ نے اپنے محکمہ بہبود آبادی کی بجٹ میں 8 گنا سے بھی زیادہ اضافہ کیا ہے جس سے دیہی اور دور دراز علاقوں میں رہنے والی خواتین کو فیملی پلاننگ اور تولیدی صحت کی خدمات تک رسائی ہوئی ہے، پاکستان ڈیموگرافک اینڈ ہیلتھ سروے کے مطابق گزشتہ پانچ سالوں کے دوران سندھ میں ایف پی میں 4 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ حکومتِ سندھ کی جانب سے ازدواجی مشاورت کے بل پر بھی کام کیا جا رہا ہے، پیپلز پارٹی خواتین کو بااختیار بنانے، صنفی مساوات، اور انفارمڈ چوائسز کے حقوق اور نوعمر و نوجوانوں کے حقوق سے کاربند ہے، پی پی پی جب منتخب ہوکر حکومت میں آئے گی تو ایسی اصلاحات کو پورے ملک میں متعارف کرائے گی۔

متعلقہ خبریں