جی ٹی وی نیٹ ورک
پاکستان

وزیراعظم کا گوادر میں کالونی بنانے کیلئے 200 ایکڑ زمین فوری دینے کا اعلان

شہباز شریف

گوادر: شہباز شریف کا کہنا ہے کہ ہماری حکومت بلوچستان کی خوشحالی کیلئے دن رات کام کرے گی، 200 ایکڑ زمین آپ کو دی جائے گی وہاں پر آپ اپنی کالونی بنائیں گے۔

وزیراعظم شہباز شریف کا تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ گوادر کے دورے کا مقصد یہاں بسنے والوں سے ملاقات ہے، گوادر کے مسائل کے حل کیلئے یہاں موجود ہوں، گوادر کا ایک ماہ میں یہ دوسرا دورہ ہے، ترقیاتی کام بے معنی ہونگے اگر یہاں کے لوگوں کو فائدہ نہ ہو، بنیادی مسائل سنجیدگی سے حل نہیں ہونگے معاملہ آگے نہیں بڑھے گا، ایک اور میٹنگ ہونی ہے اس کے بعد تفصیل سے بات کروں گا۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ہمارا فرض ہے کہ حکومت وعدوں کی پاسداری کرے، بلوچستان کے مسائل حل کرنے کیلئے سنجیدہ اقدامات اٹھائیں گے، آپ کے مسائل دل لگا کر حل کریں گے، آپ کے مسائل حل ہونے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے، گوادر کے مسائل حل کرنا اولین ترجیح ہے، احسن اقبال نے گوادر کی ترقی کا پلان منگوایا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ 2 ہزار روپے کا جواعلان کیا تھا میرٹ پر تقسیم ہونگے، ہماری حکومت بلوچستان کی خوشحالی کیلئے دن رات کام کرے گی، 100 فیصد شفاف بڈنگ ہوگ ، بولی کے تحت سب سے اچھی کمپنیوں کو کام دیا جائے گا، گوادر شہر کے پانی کے مسئلے کا فالو اپ لیتا رہا، گوادر میں پانی کی پائپ لائنز کا کام ستمبر میں مکمل ہوجائے گا، ستمبر میں نئی پائپ لائن بچھا کر پانی کی فراہمی شروع کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں: وزیراعظم شہباز شریف اور وزیراعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو کے درمیان ملاقات

انہوں نے کہا کہ کئی سال سے بجلی کا معاملہ کھٹائی میں پڑا رہا، ہمارا وفد ایران گیا اس سے پہلے ایرانی سفیر سے بھی ملاقات ہوئی، ایران نے یقین دلایا کہ کوئی تاخیر نہیں ہے، پتہ چلا کہ گزشتہ کئی برسوں سے ہماری طرف سے تاخیر ہے، ایران نے اپنی طرف سے سارا کام مکمل کرلیا تھا، 29 کلو میٹر کےلیے کئی برس لگ گئے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ اب معاہدہ ہوگیا ہے منگل کو کابینہ میں لے آئیں گے، سوال یہ ہے 100 میگاواٹ جو گوادر کو مل سکتی تھی جس میں کئی سال تاخیر کی گئی، گوادر بلوچستان کے عوام پاکستان کا حصہ ہیں اور غیور ہیں، میں نے کہا ہے کنٹریکٹر کو 2ہفتے میں موبلائز کیا جائے۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ 200 ایکڑ زمین آپ کو دی جائے گی وہاں پر آپ اپنی کالونی بنائیں گے، آپ کے مسائل کو حل کرنا میری ذمہ داری ہے، جس عہدے پر مجھے اتحادی جماعتوں نے بٹھایا یہ اس کی ذمہ داری ہے، میں نے کہا ہم دوست ملک ہیں آپ کہیں گے کہ یہ پھر کشکول لے کر چل پڑے، ہم 75 سال بعدبھی قرض کی زندگی گزار رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ دشمنان پاکستان بعض لوگوں کو آلہ کار بنا کر نشانہ بنائیں ،ایسا نہیں ہوسکتا، ایسا نہیں ہوسکتا دوست ممالک آپکے ملک میں سرمایہ کاری کریں، آپ نشانہ بنائیں، چین آپ کا مخلص اور ہمدرد دوست ہے، سعودی عرب نے جب بھی مدد کی تو کوئی سیاسی شرط نہیں لگائی، چین، یو اے ای ، قطر، ترکی نے کبھی شرائط نہیں لگائیں، جو کسی کو آلہ کار بناتے ہیں وہ پاکستان کے دشمن ہیں۔

متعلقہ خبریں