جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

منشیات اسمگلنگ کیس کی سماعت : حکومت کا مستقبل نہیں، چھٹکارا مل جائے گا : رانا ثناءاللہ

لاہور : مسلم لیگ (ن) پنجاب کے صدر رانا ثناءاللہ پر منشیات اسمگلنگ کیس میں آج بھی فرد جرم عائد نہیں ہوسکی۔ رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ حکومت کا کوئی مستقبل نہیں، 2020 میں چھٹکارا مل جائے گا۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنماء رانا ثناءاللہ کے خلاف کیس کی انسداد منشیات کی خصوصی عدالت کے جج شاکر حسن نے سماعت کی۔

سماعت پر رانا ثناءاللہ کے وکیل فرہاد علی شاہ نے استدعا کی کہ وفاقی وزیر شہر یار آفریدی سے میرے مؤکل کی سی سی ٹی وی یا فوٹیجز اے این ایف حکام فراہم کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ عدالت میں رانا ثنااللہ کے خلاف تاحال قواعد و ضوابط کے مطابق چالان جمع نہیں کروایا گیا اور نہ اس کے ساتھ لف تمام دستاویزات فراہم کی گئی ہیں۔

فرہاد علی شاہ نے کہا کہ صرف چالان کے دو صفحات فراہم کیے گئے، جو کافی نہیں ہیں۔ اس موقع پر پراسکیوٹر اے این ایف نے مؤقف اپنایا کہ اگر کوئی میڈیا پر بیان دے دیتا ہے تو پراسکیوشن اس کا ریکارڈ عدالت میں پیش کرنے کی پابند نہیں ہے۔

پراسکیوٹر نے کہا کہ قانون کے مطابق ہمارا کیس عدالت میں پیش کر دیا گیا ہے۔ رانا ثناء اللہ کے وکلاء تاخیری حربے استعمال کر رہے ہیں، عدالت سے استدعا کی گئی کہ اس کیس کی سماعت روزانہ کی بنیاد پر کی جائے۔

فاضل جج نے کہا کہ آج عدالتی عملے کی کمی کے سبب فیصلہ نہیں لکھوایا جاسکتا، لہذا اس کیس پر مزید کارروائی 8 فروری کو ہوگی۔

بعد ازاں سماعت کے بعد مسلم لیگ (ن) راناثناءاللہ نے عدالت کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ عدالت سے استدعا کریں گے کہ شہریار آفریدی اور ڈی جی اے این ایف کو طلب کیا جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ شہریار آفریدی نے فیصل آباد سے ایک شخص کو پکڑنے کا دعویٰ کیا تھا، جن لوگوں کو پکڑا گیا انہیں عدالت میں پیش کریں۔

سماعت کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے رانا ثناءاللہ کا کہنا تھا کہ شہریار آفریدی عدالت میں آکر وضاحت اور جس ویڈیو کا تذکرہ کیا اسے پیش کریں۔ مجھ پر بے بنیاد الزاما ت لگائے گئے۔ ویڈیو عدالت میں پیش کیوں نہیں کی جارہی۔

انہوں نے کہا کہ شہریار آفریدی نے جو بندے پکڑے وہ کہاں ہیں؟ جن لوگوں کو پکڑا گیا ہے، انہیں عدالت میں پیش کریں۔ شہریار آفریدی کہتے رہے ہیں کہ ہم نے ایئرپورٹ سے ایک آدمی پکڑا۔ حکومت نے سیاسی انتقام کی بنیاد پر مقدمہ قائم کیا۔

لیگی رہنماء نے بتایا کہ ملک میں مہنگائی بہت زیادہ ہے اور لوگوں کے کاروبار بن ہوچکے ہیں، جلد ہی اپوزیشن کا مشترکہ اجلاس ہونے جارہا ہے، جس میں مشترکہ لائحہ عمل بنایا جائے گا۔ حکومت کا کوئی مستقبل نہیں ہے، 2020 میں عوام کو اس حکومت سے چھٹکارا مل جائے گا۔

متعلقہ خبریں