بھارت کو تاریخی شکست، رضا ربانی آئی پی یو کی مجلس عاملہ کے رکن منتخب

آئی پی یو

بلغراد : پاکستان نے پارلیمانی سفارتکاری میں بھارت کو تاریخی شکست دے دی، بھارتی تمام تر سازشوں کے باوجود رضا ربانی آئی پی یو کی مجلس عاملہ کیلئے ایشیاء پیسیفک گروپ کی جانب سے متفقہ ممبر منتخب ہوگئے۔

دنیا بھر کی ایک سو اٹھاسی پارلیمان پر مشتمل انٹر پارلیمانی یونین کی ایک سو اکتیسویں جنرل اسمبلی کا اجلاس سربیا کے دارلحکومت بلغراد میں جاری ہے، جس میں اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی قیادت میں پاکستانی پارلیمانی وفد نے شرکت کی۔

انٹر پارلیمانی یونین لے ایشیا پیسیفک گروپ کا اجلاس چیئرمین اسپیکر اسد قیصر کی زیر صدارت ہوا۔ اجلاس میں ایشیاء پیسیفک ممالک کی جانب سے آئی پی یو کی مجلس عاملہ کے لیے متفقہ نمائندہ منتخب کرنا تھا۔

یہ بھی پڑھیں : بھارت کو ایک اور سفارتی شکست، شنگھائی تعاون تنظیم کی مسئلہ کشمیر حل کرانے کی پیشکش

اجلاس میں ایشیاء پیسیفک ممالک نے آئی پی یو کی مجلس عاملہ کیلئے متفقہ نمائندہ منتخب کرنا تھا اور پاکستان کی پارلیمنٹ نے اس عہدے کیلئے سینیٹر رضا ربانی کو نامزد کیا تھا۔

گروپ اجلاس میں ہندوستانی وفد نے انتخابات مؤخر کرانے کی بھرپور کوشش کی، پاکستان نے خفیہ الیکشن کا مطالبہ کیا، خفیہ رائے دہی میں اپنی یقینی ہار کا اندازہ کرتے ہوئے ہندوستانی امیدوار نے اپنا نام واپس لینے کا اعلان کر کے شکست مان لی۔

بھارتی لوک سبھا نے کانگریس کے رکن ششی تھرور کو امیدوار نامزد کیا تھا، بھارتی کوشش کو 34 رکنی ایشیاء پیسیفک گروپ کے کسی بھی رکن سے پذیرائی نہ مل سکی، بھارتی امیدوار کی انتخاب سے دستبرداری پر سینیٹر رضا ربانی بلا مقابلہ منتخب ہوئے۔

سینیٹر رضا ربانی کے علاوہ ایشیاء پیسیفک گروپ نے سینیٹر شیری رحمان کو کمیٹی برائے پائیدار ترقی، مالیات اور تجارت کا رکن اور سینیٹر جاوید عباسی کو ڈرافٹنگ کمیٹی کا رکن منتخب کرلیا۔

خیال رہے کہ اس اجلاس میں بھارت کی جانب سے ششی تھرور نے پاکستان کے اے پی اے مکمل اجلاس کی میزبانی کرنے سے معذرت پر واویلا کیا گیا، پاکستان نے مقبوضہ کشمیر کے موجودہ حالات کے باعث میزبانی سے معذرت کرلی تھی۔

ششی تھرور کا کہنا تھا کہ مقبوضہ کشمیر کے حالات کسی طرح سے پڑسیوں کو متاثر نہیں کرتے ہیں۔ پاکستان اس اسٹیج کو سیاست کے لیئے استعمال کررہا ہے۔