جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

اسپورٹس سٹی ریفرنس، فرد جرم کی تاریخ مقرر، سیکیورٹی ادارے حکومت کا آلہ کار نہ بنیں : احسن اقبال

حکومت کا آلہ کار نہ

اسلام آباد : احسن اقبال کا کہنا ہے کہ سیکیورٹی اداروں سے کہتا ہوں کہ حکومت کا آلہ کار نہ بنیں۔

احتساب عدالت اسلام آباد میں نارووال اسپورٹس سٹی کمپلیکس ریفرنس پر سماعت ہوئی۔ احتساب عدالت کے جج اصغر علی نے ریفرنس کی سماعت کی۔

احسن اقبال سمیت تمام ملزمان عدالت کے روبرو پیش ہوئے، حاضری لگائی گئی۔ تمام ملزمان پر فرد جرم کیلئے 7 دسمبر کی تاریخ مقرر کردی گئی ہے۔ جج اصغر علی نے ہدایت کی کہ ملزمان کو ریفرنس کی کاپیاں فراہم کریں تاکہ فرد جرم کی کارروائی بڑھے۔

احسن اقبال نے پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ وہ انتقامی کارروائیاں ہیں جن کی وجہ 2018 تک کے ترقیاتی کام ہیں۔ جس شخص نے اس ترقی میں حصہ ڈالا ان کو آج جیلوں میں ڈالا جا رہا ہے۔ جنہوں نے اس ترقی کو نیست و نابود کیا وہ آج گلشرے اڑاتے پھر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دنیا میں پاکستان کی جگ ہنسائی ہو رہی ہے۔ نیب نے جس طرح عمران نیازی کی فرمائش پر کیس بنائے وہ مذاق بن گیا ہے۔ عمران خان ادارے آپ کے ماتحت ہیں مجھ پر کرپشن ثابت کر کے دکھاؤ۔ میری وزارت سے 32 سو روپے ترقیاتی کاموں کیلئے جاری ہوئے 32 روپے رشوت میں ثابت کر دو میں مجرم ہونگا۔

یہ بھی پڑھیں : سلیکٹڈ حکومت اور ہائبرڈ نظام ناکام ہوچکا ہے : شاہد خاقان عباسی

ان کا کہنا تھا کہ یہ پراجیکٹ تمام متعلقہ فورمز سے منظور ہوا۔ حکومت کا اصل ایجنڈا کوئی اور ہے وہ کرتار پور بنانے والوں کو فریم کرنا چاہتی ہے۔ کرتار پور کی تعمیر میں 17 ارب روپے لگے اور اس کا پی سی ون بھی منظور نہیں ہوا۔ جس منصوبے کی کوئی منظوری نہیں ہوئی، وہ حلال ہے جس کی منظوری ہوئی وہ حرام ہے۔

لیگی رہنماء نے کہا کہ آٹا اور چینی اسکینڈل میں 4 سو ارب روپے کی کرپشن سامنے آچکی ہے، کوئی نہیں بولتا۔ عمران خان اور وزیر ہوا بازی کے بیان کی وجہ سے ایک سو ارب روپے سے زیادہ نقصان ہو گیا، پوری ایوی ایشن انڈسٹری بیٹھ گئی کوئی نوٹس نہیں لیتا۔

احسن اقبال کا کہنا تھا کہ چار ایجنسیوں کو ملا کر پنجاب میں کمیٹی بنائی گئی ہے، جو ن لیگ کے عہدیداروں کے خلاف جھوٹے مقدمات بنا رہے ہیں۔

اگر یہ سلسلہ بند نہ ہوا تو ہمیں وہ نام لینے پڑینگے جو یہ سب کر رہے ہیں۔ سیکیورٹی اداروں سے کہتا ہوں کہ حکومت کا آلہ کار نہ بنیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت آپ کو اپنی بقاء کیلئے استعمال کر رہی ہے۔ سیکیورٹی ادارے دہشتگردی کے خلاف اپنی کارروائیاں جاری رکھیں۔ انٹیلی جنس بیورو کو سیاسی انتقامی کارروائیوں میں جھونک دیا گیا ہے۔ جب سیکیورٹی ایجنسیوں کو سیاست دانوں کے پیچھے لگا دیا جائے گا تو دہشتگردوں کو کھلی چھوٹ ملے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ ماضی میں حکومت چھینک مارتی تھی تو ادارے کہتے تھے کہ فلو ہو گیا ہے۔ آج حکومت کینسر زدہ ہے اور ادارے کہہ رہے ہیں کہ معمولی بخار ہے۔ پی ڈی ایم اس حکومت کو گھر بھیجے گی۔

متعلقہ خبریں