جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

مارچ میں سیاسی ہلچل، اپوزیشن کے درمیان ملاقاتوں و پیغامات کا سلسلوں کا آغاز

پیغامات

اسلام آباد : اسلام آباد میں ایک مرتبہ پھر مارچ کے قریب آتے ہی سیاسی ہلچل شروع ہوگئی ہے، حکومتی اور اپوزیشن ارکان کی میل ملاقاتوں اور پیغامات کے سلسلوں کا آغاز ہوگیا۔

ذرائع کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے اعلیٰ سطحی پیغامات مولانا فضل الرحمان کو مل گئے۔ پیغام میں کہا گیا ہے کہ ہم ساتھ مل کر چلنا چاہتے مگر غیر آئینی اقدام کی حمایت نہیں کرسکتے۔

مسلم لیگ کی قیادت کا پیغام سردار ایاز صادق نے پہنچایا، پیپلز پارٹی کا پیغام سابق وزیراعظم کے ذریعے پہنچایا گیا۔

یہ بھی پڑھیں : مولانا فضل الرحمٰن سے ملاقات، رہبر کمیٹی برقرار ہے، بلایا گیا تو ضرور جائیں گے : ایاز صادق

بڑی اپوزیشن جماعتوں کا دباؤ ہے کہ ایوان کے اندر مل کر احتجاج اور حکومت کو ٹف ٹائم دیا جاسکتا ہے۔ ن لیگ نے پیغام میں کہا کہ جب حکومت خود اپنے بوجھ تلے دب رہی ہے تو ہم الزام کیوں لیں۔  

ن لیگ کی جانب سے مارچ تک اپوزیشن لیڈر کے پاکستان آمد کے امکان سے بھی آگاہ کیا گیا۔ ن لیگ نے پیشکش کی کہ رہبر کمیٹی کا حالیہ صورتحال پر اجلاس بلایا گیا تو ن لیگ شریک ہوگی۔

دوسری طرف پیپلز پارٹی کو مولانا فضل الرحمان کے سرعام تنقید کا نشانہ بنانے پر تحفظات ہیں۔ پیپلز پارٹی کا مؤقف ہے کہ جو باتیں بند کمرے میں ہوسکتی ہیں اس کا کھلے عام اظہار خود اپوزیشن کو کمزور کرے گا۔

ن لیگ کی جانب سے اہم امور پر مشاورت کے بغیر فیصلوں پر بھی پیپلز پارٹی کو تحفظات ہیں۔ اپوزیشن جماعتوں کا جلد اسلام آباد میں مشاورتی اجلاس ہونے کا امکان ہے۔

متعلقہ خبریں