جی ٹی وی نیٹ ورک
بریکنگ نیوز

براڈ شیٹ معاملہ : قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی نے چیئرمین نیب کو طلب کرلیا

قائمہ کمیٹی نے چیئرمین

اسلام آباد : قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات نے چیئرمین نیب کو آئندہ اجلاس میں بریفنگ کیلئے طلب کرلیا۔

قومی اسمبلی قائمہ کمیٹی اطلاعات کا اجلاس چئیرمین جاوید لطیف کی زیر صدارت ہوا، اراکین نے براڈ شیٹ کے معاملے پر بحث کی۔

چیئرمین کمیٹی جاوید لطیف نے نیب پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ چیئرمین نیب آکر وضاحت دیں کہ کیوں اربوں روپے براڈ شیٹ کو دیئے گئے؟ لوگ بھوکے مررہے ہیں، ہم لاکھوں روپے ایک ادارے کو دے رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ براڈ شیٹ کے حوالے سے چیزوں پر ریاست کو شرمندگی ہوئی۔ ایک ادارے کی غلطی کی وجہ سے عوام کے اربوں روپے ادا کرنے پڑے۔ نیب نے بار بار اپنا مؤقف بدلا۔ لندن ہائی کورٹ کا فیصلہ آیا کہ غلط اکاؤنٹ میں پیسے چلے گئے۔ پیسے غلط طریقے سے کیوں گئے؟ یہ تاثر نہیں جانا چاہیے کہ حکومت نیب کا دفاع کررہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں : لاہور ہائیکورٹ نے چوہدری برادران کی چیئرمین نیب کے اختیارات کیخلاف درخواست نمٹا دی

تحریک انصاف کے فرخ حبیب نے چیئرمین نیب کی طلبی کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ معاملے پر حکومت نے کمیٹی تشکیل دی ہے، تحقیقات کا انتظار کرلیا جائے۔

سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ کمیٹی 45 دنوں میں کام مکمل کرے گی، انکوائری کے نتیجے میں تمام سوالات کے جواب ملیں گے، قوم کو پتہ چلنا چاہیے ’’الف سے ے‘‘ تک کیا ہوا، اس طرح سے ایک ادارے کو نہیں بلانا چاہیے۔ اگر چیئرمین کو بلانا ہے تو باقی کرداروں کو بھی بلائیں، کل کوئی کمیٹی سابق وزیراعظم کو بھی بلا سکتی ہے۔ کمیٹی کسی کو بھی طلب کرنے کی مجاز ہے۔

ممبر کمیٹی ندیم عباس نے کہا کہ موجودہ چیئرمین کے ساتھ پرانے چیئرمین کو بھی بلایا جائے۔ ناز بلوچ نے کہا کہ اس بات کی تحقیقات ہونی چاہیں کہ کمیشن کس نے مانگا۔ چیئرمین نیب آکر بتائیں کیا وجوہات اور محرکات ہیں۔

نفیسہ شاہ نے کہا کہ قائمہ کمیٹی کا اختیار ہے کسی کو بھی طلب کرلے۔ براڈ شیٹ پر تین سیریز کا ایک کا سیریل چل سکتا ہے۔ براڈ شیٹ کے باعث پاکستان ملین ڈالرز کا مقروض ہوا۔

متعلقہ خبریں