آمدن سے زائد اثاثے : احد چیمہ کے خلاف کیس کی سماعت 28 مئی تک ملتوی

لاہور: احتساب عدالت میں سابق ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ کے خلاف، تمام گواہان کا بیان قلم بند کرنے کے لیے سماعت 28 مئی تک ملتوی کردی۔

احتساب عدالت میں سابق ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ کے خلاف آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس پر سماعت ہوئی۔

نیب پراسیکیوٹر وارث علی جنجوعہ نے عدالت کو بتایا کہ سابق ڈی جی ایل ڈی اے احد چیمہ پر فرد جرم عائد کر دی گئی تھی، اس کیس میں دس افراد بطور گواہ شامل ہیں۔

عدالت میں اب تک چھ گواہان اپنے بیان قلمبند کروا چکے ہیں، محمد اخلاق خان ڈپٹی ڈائریکٹر فنانس سول سروسز اکیڈمی والٹن روڈ لاہور، مشتاق احمد ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اکاونٹس آفیسر بٹگرام خیبر پختونخوا، عدیل شفیع آڈیٹر ڈسٹرکٹ اکاونٹس آفیسر ایبٹ آباد، محمد سلیم اکاونٹس آفیسر اے جی آفس پنجاب، شہزاد علی اسسٹنٹ اکاونٹس آفیسر ڈسٹرکٹ اکاونٹس آفس اوکاڑہ کی شہادتیں قلمبند کی گئیں۔

نیب پراسیکیوٹر وارث علی جنجوعہ کے مطابق احد چیمہ نے اندرون و بیرون ملک اربوں روپے کے ناجائز اثاثہ  بنائے، ان کے اثاثہ جات کی مارکیٹ اربوں روپے کے قریب ہے، انہوں نے فیملی ممبران کے نام بے نامی جائیدادیں بنائیں۔

نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ احد چیمہ کے اثاثہ جات کی مارکیٹ  ویلیو 600 ملین کے قریب ہے، انہوں نے فیملی  ممبران کے نام بے نامی جائیدادیں بنائیں، احد چیمہ نے اہلیہ صائمہ احد، والدہ نصرت افزا، بھائی احمد سعود اور بہن سعدیہ منصور کے نام جائیدادیں بنائیں۔

عدالت نے مقدمے کے تمام گواہان کا بیان قلم بند کرنے کے لیے سماعت 28 مئی تک ملتوی کردی۔