جی ٹی وی نیٹ ورک
دنیا

یوکرین پر روسی حملے کا خطرہ، امریکہ کی نیٹو کو مکمل حمایت اور اتحاد کی یقین دہانی

مکمل حمایت

واشنگٹن : امریکہ اور نیٹو نے روس سے کہا ہے کہ وہ یوکرین کی سرحدوں سے دستبردار ہو جائیں، انتباہ دیا ہے کہ روسی حملہ نقصان دہ اقتصادی پابندیوں کا باعث بنے گا، امریکہ نے نیٹو کو مکمل حمایت اور اتحاد کا یقین دلایا ہے۔

روس کے یوکرین پر موجود فوج کو نہ ہٹانے اور حملے کے خطرے کے پیش نظر یورپی یونین سے تعلقات خراب ہوگئے ہیں، حالانکہ روس بار بار تردید کرچکا ہے کہ اس کا یوکرین پر حملے کا کوئی ارادہ نہیں، تاہم روس نیٹو کی جانب سے یوکرین کی حمایت کو مغربی کنارے پر بڑھتا ہوا خطرہ سمجھتا ہے۔

نیٹو نے اعلان کیا کہ کچھ رکن ممالک اپنی افواج کو اسٹینڈ بائی پر رکھ رہے ہیں اور مشرقی یورپ میں اضافی بحری جہاز اور لڑاکا طیارے بھیج رہے ہیں، کیونکہ برطانیہ اور امریکہ نے روسی حملے کے خدشات کے درمیان سفارت کاروں کے اہل خانہ کو یوکرین سے نکل جانے کا حکم دیا تھا۔

امریکہ کے صدر جو بائیڈن نے یوکرین کے خلاف روسی حملے کو روکنے کے لیئے یورپی رہنماؤں سے ایک گھنٹہ 20 منٹ کی ویڈیو کانفرنس کے ذریعے بات چیت کی اور مکمل حمایت اور اتحاد کا اعلان کیا، جس کے حوالے سے پینٹاگون کا کہنا ہے کہ نیٹو کی مدد کے لیئے 8,500 امریکی فوجیوں کو تیار رہنے کا حکم دیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : روس کے ساتھ امریکا کی کشیدگی مزید خطرناک ہوگئی

امریکا نے نیوکلیئر پاور بحری بیڑا روانہ کردیا، یو ایس ایس ہیری ٹرومین بحیرہ روم میں لنگر انداز ہے۔ سرد جنگ کے بعد پہلی بار امریکی بحری بیڑا نیٹو کی کمانڈ میں دیا گیا ہے

لندن میں وزیر اعظم بورس جانسن کے دفتر نے بھی کہا ہے کہ رہنماؤں نے بڑھتی ہوئی روسی دشمنی کے تناظر میں بین الاقوامی اتحاد کی اہمیت پر اتفاق کیا۔

جرمن چانسلر اولاف شولز نے کہا کہ "یہ روس پر منحصر ہے کہ وہ کشیدگی میں کمی لانا چاہتا ہے یا نہیں”

نیٹو کے سیکرٹری جنرل جینز اسٹولٹن برگ نے خبردار کیا کہ اگر ماسکو کی جانب سے یوکرین کے خلاف "مزید جارحیت” کی گئی تو اسے "سخت قیمت” بھگتنا پڑے گی۔ ویڈیو کانفرنس میں فرانس، اٹلی، پولینڈ اور یورپی یونین کے رہنماء بھی تھے۔

ماسکو اس بات کی ضمانت کا مطالبہ کر رہا ہے کہ یوکرین کو کبھی بھی نیٹو میں شامل ہونے کی اجازت نہ دی جائے اور ساتھ ہی کشیدگی میں کمی کے عوض امریکہ کی طرف سے دیگر مراعات بھی دی جائیں۔

امریکہ اور نیٹو نے روسی مطالبات کو مسترد کر دیا ہے اور پیوٹن سے کہا ہے کہ وہ یوکرین کی سرحدوں سے پیچھے ہٹ جائیں، انتباہ دیا ہے کہ روسی حملے سے اقتصادی پابندیوں کو نقصان پہنچے گا اور ساتھ ہی مشرقی یورپ میں نیٹو کی موجودگی میں اضافہ ہو گا۔

متعلقہ خبریں