جی ٹی وی نیٹ ورک
دنیا

ایرانی صدر کی مستعفیٰ ہونے کی دھمکی کے بعد طیارہ گرانے کی حقیقت قبول کی گئی

نیو یارک : امریکی اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ پاسداران انقلاب نے تین روز تک یوکرینی طیارے کو میزائل سے مار گرانے کی حقیقت ایرانی صدر حسن روحانی سے چھپائے رکھی۔

امریکی اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ پاسدارن انقلاب کو طیارے کی میزائلوں سے تباہی کے چند منٹ بعد ہی حقیقت کا ادراک ہو گیا تھا، لیکن تین روز تک صدر حسن روحانی سے یہ بات چھپائی گئی۔

امریکی اخبار کی رپورٹ کے مطابق صدر حسن روحانی کو 11 جنوری کو حقیقت بتائی گئی، جس پر ایرانی صدر نےالٹی میٹم دیا کہ ذمے داری قبول کی جائے ورنہ وہ استعفیٰ دے دیں گے۔

اس تمام تر صورت حال پر ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای نے مداخلت کی اور حکم دیا کہ طیارے سے متعلق حقیقت تسلیم کی جائے۔

واضح رہے کہ ایران میں 8 جنوری کو یوکرین کا مسافر طیارہ پرواز کے چند ہی منٹ بعد گِر کر تباہ ہو گیا تھا۔ اس حادثے میں طیارے پر سوار مسافروں اور عملے کے اراکین سمیت تمام 176 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

ایران نے ابتدائی طور پر طیارے کو میزائل سے مار گرائے جانے کے واقعے کی تردید کی تاہم جب اس حوالے سے ویڈیوز منظر عام پر آئیں تو ایران نے اپنی غلطی کا اعتراف کرتے ہوئے انسانی جانوں کے ضیاع پر نہ صرف معافی مانگی بلکہ متاثرہ افراد کے لواحقین کو معاوضہ دینے کا بھی اعلان کیا۔

متعلقہ خبریں