اردن: گھر میں آتشزدگی 13 پاکستانی جاں بحق

وادی اردن میں زرعی زمین پر عارضی رہائش گاہوں پر لگنے والی آگ کے نتیجے میں 8 بچوں سمیت 13 پاکستانی شہری جاں بحق ہوگئے۔

برطانوی خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کی رپورٹ کے مطابق اردن کے محکمہ شہری دفاع کے ترجمان ایاد العمر نے ایک بیان میں کہا کہ رات گئے بھڑکنے والی آگ سے 3 افراد زخمی بھی ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ ابتدائی معلومات سے ایسا معلوم ہوتا ہے کہ آگ کسی شارٹ سرکٹ کے نتیجے میں لگی۔

خیال رہے کہ وادی اردن کے سبزیوں اور پھلوں کے لیے ذرخیز علاقے میں نجی فارمز میں ہزاروں غیرملکی مزدور انتہائی خراب حالات میں مقیم ہیں۔

اردن کے محکمہ شہری دفاع کے ایک اور ذرائع نے کہا کہ ٹین کی چادروں سے بنے گھروں میں تارکین وطن مزدوروں کے 2 خاندان رہائش پذیر تھے۔

بھارتی ریاست تامل ناڈو شدید بارشیں، 21 افراد ہلاک

انہوں نے بتایا کہ پولیس نے آتشزدگی کے واقعے کی تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔

آگ لگنے کے نتیجے میں جھلسنے ہونے والے 3 افراد کو ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

واقعہ اردن کے مشرقی علاقے کرامے میں ایک گھر میں آگ لگی جہاں 2 پاکستانی خاندان مقیم تھے اور فائر فائٹرز کی جانب سے قابو پانے سے قبل ہی آگ نے گھر کو لپیٹ میں لے لیا۔

دفتر خارجہ کی تصدیق

بعد ازاں پاکستانی دفتر خارجہ نے بھی اردن میں آتشزدگی کے واقعے میں 13 پاکستانیوں کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کردی۔

دفتر خارجہ سے جاری بیان کے مطابق آتشزدگی کے واقعے میں جاں بحق ہونے والوں میں 7 بچے، 4 خواتین اور 2 مرد شامل ہیں جن کا تعلق ایک ہی خاندان سے تھا جبکہ 3 افراد زخمی بھی ہوئے جن کی حالات خطرے سے باہر ہے۔